فردیات

اِظہارِ آرزُو سے، رَوَیّے بَدَل گئے
حِدَّت بڑھی تو سائے بھی گرمی میں ڈھَل گئے
﴿۔۔۔﴾
جب بھی ہم تم سے مِل کے آتے ہیں
پھول، شاخوں پہ کھِل کے آتے ہیں
﴿۔۔۔﴾
حیرَت ہے، وہی فَردِ مَحاسِن ہے کَم و بیش
اَسمائے اِلٰہی میں مَگَر "ماں” نہیں مِلتا
﴿۔۔۔﴾
کیا زُعم ہے گویا کہ ہُوئی راہِ فَنا بَند
بیٹھا ہُوں کِیے فَخر سے مُٹّھی میں ہَوا بَند
﴿۔۔۔﴾
مَنظَرِ جَذب و فَنا یُوں نَظَر آتا ہے مُجھے
آئینہ بھی تِری تَصویر دِکھاتا ہے مجھے
﴿۔۔۔﴾
سُراغ پا نَہ سَکے کوئی میرے غَم کا کبھی
مِٹاتا جاتا ہُوں نقشِ قَدَم بھی ہاتھ کے ہاتھ
﴿۔۔۔﴾
تُجھ کو نعم البدل کی خواہش ہے
آ مرے دل سے اپنے دل کو بدل
﴿۔۔۔﴾
دامنِ درد کو گلزار بنا رکھا ہے
آؤ اِک دن دلِ پُر خوں کا ہنر تو دیکھو
﴿۔۔۔﴾
دَستَک بھی کیا کرے کوئی دَر کھولتا نہیں
زِندہ ہے سارا شہر مَگَر بولتا نہیں
﴿۔۔۔﴾
ہجومِ ہَمسَفَراں تھا کہ ایک میلا تھا
فرازِ دار سے دیکھا تَو میں اکیلا تھا
﴿۔۔۔﴾
ہے اَزَل سے پَردَہ دارِعِزَّت و نامُوسِ عِشق
بَن کے چَشمِ مُنتَظِر ہَر زَخمِ دِل اَندَر کُھلا
﴿۔۔۔﴾
گِھرا ہُوا میں شَبِ کَربَلائے عَصر میں ہُوں
ذَرا چراغ بُجھا دُوں کہ کُچھ نَظَر آئے
﴿۔۔۔﴾
بارانِ سَنگ ہے شَجَرِ میوہ دار پَر
بے بَرگ و بار سُوکھے شَجَر خیریَت سے ہیں
﴿۔۔۔﴾
خواہانِ دوستی سے یہ پہلے ہی پُوچھ لو
ترکِ تَعَلُّقات کا کیا اِنتظام ہے
﴿۔۔۔﴾
وقارِ عِشق کو مِلتی نہ گر اَنا ہم سے
ہَر اِک حَسین بَزعمِ خُود اِک خُدا ہوتا
﴿۔۔۔﴾
میں انتقام اندھیروں سے لوں گا جی بھر کے
ہر ایک بزم سے نکلوں گا روشنی کر کے
﴿۔۔۔﴾
میں جیسے کرتا ویسے ہی تُو احترام کر
لَوحِ مَزار! جُھک، اُنہیں جُھک کر سلام کر
﴿۔۔۔﴾
دَشت کی طَرَف بھاگا کہہ کے ایک سَودائی
کِس بَلا کا مَجمَع ہے کِس غَضَب کی تنہائی
﴿۔۔۔﴾
دَورِ جہل میں اِس کو حَق نہیں ہے جینے کا
پِھریہ جی رَہی ہے کیوں آگَہی سے لَڑتاہُوں
﴿۔۔۔﴾
ہَم وہ طَبیِب ہیں کہ مَرَض کُچھ عِلاج کُچھ
کَرنا عِلاجِ کور تھا، مَنظَر بَدَل دِیا
﴿۔۔۔﴾
ضَمِیرِ عَصر کا یہ جَشنِ مَرگ ہے، وَرنہ
بھَرے جَہاں میں کِسی نے تَو کُچھ کَہا ہوتا
﴿۔۔۔﴾
نَظَر و نُطق و سَماعَت سے گَواہی لیں گے
ہَم بھَلا کیوں سَنَدِ ظِلِّ اِلٰہی لیں گے
﴿۔۔۔﴾
بِیا بَخَلوَتَم اَفشائے راز خُواہَم کَرد
دِلَم بَہ سِحرِ نگاہِ تو باز خُواہَم کَرد
﴿۔۔۔﴾
تُم ذَرا میرے سامنے بیٹھو
میں خَلاؤں سے ہو کے آتا ہُوں
﴿۔۔۔﴾
میں، تَصَوُّر میں سَجائے آشیاں
رو رَہا ہُوں ہاتھ میں تِنکے لیے
﴿۔۔۔﴾
کِس ہَوا میں ہو مِیاں؟ پُوچھتی ہے وَقت کی گَرد
کِس کا نَقشِ کَفِ پا میں نے سَدا رَکّھا ہے؟
﴿۔۔۔﴾
مُصحَفِ رُخ پَہ مَیکَدہ آنکھَیں
تُم تَو دَیر و حَرَم اُٹھا لائے!
﴿۔۔۔﴾
حَرف کیا؟ لَفظ اُور معانی کیا؟
"زیر” گر ہو گیا "زَبَر” اِک دِن
﴿۔۔۔﴾
کیا کہیے مجھ میں کون تھا کَل محوِ گُفتُگو
کیا کیا کُھلے ہیں راز شکستِ اَنا کے بعد
﴿۔۔۔﴾
میں پُر خلوص محبّت کا دِل سے قائل ہُوں
کوئی بَتائے تَو لیکن، کہاں سے مِلتی ہے؟
﴿۔۔۔﴾
یہ مَزاروں پَہ دَھماکوں کے بَہانے کَب تَک
اَب کِیے جائیں گے تَعمِیر بَہانوں کے مَزار
﴿۔۔۔﴾
ایک وہ زمانہ تھا موت سے یہ عاجز تھی
موت اب کھلونا ہے زندگی کے ہاتھوں میں
﴿۔۔۔﴾
یہ سَب مَسائلِ مَوت و حَیات و کفر و حَق
خُدا کے ہاتھ میں کچھ اِختیار ہے کہ نہیں؟
﴿۔۔۔﴾
مُمکِن ہے اِتّفاق سے اُٹّھی ہووہ نَظَر
دِل ہے کہ لے اُڑا اُسے کیا کیا سَمَجھ لِیا
﴿۔۔۔﴾
فِکرِ تَعبیر بعد میں کرنا
پہلے آنکھوں میں خواب تَو لاؤ
﴿۔۔۔﴾
دادِ سخن کے شور میں خاموش اِک نظر
حُسنِ غزل کی ہے کہ ہے حُسنِ طلب کی داد
﴿۔۔۔﴾
ہَر نَئے صَدمے پَہ ضاؔمن اِک غَلَط فہمی ہُوئی
لوگ کہتے تھے کہ صَبر آجائے گا، کَب آئے گا؟
﴿۔۔۔﴾
اِک آندھیوں کا رَفیق، ایک بَرق کا ہَمراز
یہ باغباں مِرا گُلشَن جَلا کے چھوڑیں گے
﴿۔۔۔﴾
سکھا دیا ہے بہت کچھ فریبِ منزل نے
سو اب جنوں کو کوئ نقشِ پا پسند نہیں
﴿۔۔۔﴾
ذَرَّہِ خاکِ وَطَن! وَجہِ محبّت مَت پُوچھ
تُجھ میں اسلاف کے پوشیدہ بَدَن ڈُھونڈتا ہُوں
﴿۔۔۔﴾
بارانِ سنگ ہے شَجَرِ میوہ دار پر
بے برگ و بار سوکھے شَجَر خیریت سے ہیں
﴿۔۔۔﴾
بادِ صَبا پہ، خاروں پہ، موسم پہ، اِتّہام
واقف اَگرچہ سَب ہیں کہ صیّاد کون ہے
﴿۔۔۔﴾
جو دَورِ خانہ بَدوشی تھا اِن کا، خَتم ہُوا
ہَر ایک دَرد و اَلَم اَب مِری پَناہ میں ہے
﴿۔۔۔﴾
گردشِ دَوراں پر دو مختلف اشعار
چُپکے سے اَپنی جان بَچا کَر نِکَل گئی
میں پِھر رَہا تھا گَردِشِ دَوراں کے آس پاس
ہِمَّت نہیں ہے اِس میں کہ یہ مجھ کو ڈھونڈ لے
میں رہ رَہا ہُوں گَردِشِ دَوراں کے آس پاس
﴿۔۔۔﴾
مُنہ جو چھپائے پِھرتا ہوں دیوار و در سے میں
ڈرتا ہوں بات کرتے ہوئے اپنےگھر سے میں
﴿۔۔۔﴾
دل و نظر کے مسائل خرَد کے بس میں نہیں
معاملاتِ جنوں ہیں، جنوں سے بات کرو
﴿۔۔۔﴾
نقش بَر آب جِس کو سمجھے ہم
نقش وہ آبِ چشمِ نَم میں ہے
﴿۔۔۔﴾
جمالِ ظرف بہ حَدِّ کمال ہے اُس کا
میں جو بھی سوچُوں وہ پہلے خیال ہے اُس کا
﴿۔۔۔﴾
جادَہِ جستجو پَہ رَہ منزلِ آگہی نہ پُوچھ
ہو گا سفَر تمام کب؟ ایسے سوال بھی نہ پُوچھ
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s