طوفاں مری خواہش ہیں تو گرداب مرے خواب

خورشید نہ یہ انجم و مہتاب مرے خواب
طوفاں مری خواہش ہیں تو گرداب مرے خواب
پوچھے تو کوئی کون ہے ہر شخص کے اندر
جو چیختا رہتا ہے مرے خواب مرے خواب
اِس خوف سے کرتا ہی نہیں تجھ سے بیاں میں
کرجائیں نہ تجھ کو کہِیں بیخواب مرے خواب
گھبراتا ہے دل دُور سے اب دیکھ کر اِن کو
اِک دَور تھا جب تھے مرے احباب مرے خواب
ضامنؔ وہ چلا آتا ہے ہر خواب میں میرے
واقف ہے کہ ہیں واقفِ آداب مرے خواب
ضامن جعفری

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s