میرا وُہی اُس سے واسطہ ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 58
چھت کو جو ستوں کا آسرا ہے
میرا وُہی اُس سے واسطہ ہے
اُترا ہے کہاں کہاں سے جانے
نس نس میں جو زہر سا بھرا ہے
اپنائیں نہ خاک و باد جِس کو
وُہ پیڑ بھلا کہاں پھلا ہے
کیوں بات یہ، ناتواں نہ جانے
کب شیر شکار سے ٹلا ہے
حاوی ہے جو ہر کہیں سروں پر
ناوقت وُہ مِہر کب ڈھلا ہے
جو عمر گزشتنی ہے ماجِد!
بِیتے بھی تو اُس کا رمزکیا ہے
ماجد صدیقی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s