احتیاط و احتیاط

منصور آفاق ۔ غزل نمبر 9
اس قدر یہ انبساط
احتیاط و احتیاط
دو گھروں کے درمیاں
تیغ تیور پل صراط
شیشہء جاں پھوڑ کر
بہہ گیا آبِ نشاط
آ گرے ہیں سین پر
شین کے تینوں نقاط
دوست امریکا کا وہ
اور کیا میری بساط
بڑھ رہا ہے باغ میں
موسموں کا اختلاط
وہ شکاری وہ محیط
میں گرفتہ میں محاط
منصور آفاق

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s