ٹیگ کے محفوظات: کُچھ مِری فِکر بھی ہے خوں میں شَرابور بہت

کُچھ مِری فِکر بھی ہے خوں میں شَرابور بہت

نَفسِ لَوّامہ تُو چُپ کیوں ہے مَچا شور بہت
نَفسِ اَمّارا ہُوا جاتا ہے مُنہ زور بہت
حَرفِ حَق گوشِ سَماعَت سے ہُوا ہے محروم
چَشمِ بینا بھی نَظَر آئی مجھے کور بہت
دیتا رہتا ہے دِلاسا مُجھے یُوں میرا ضَمیِر
آرزوئیں تَو مِری بھی ہیں لَبِ گور بہت
خُونِ دِل بھی ہے مِرے اَشکِ رَواں میں ضامِنؔ
کُچھ مِری فِکر بھی ہے خوں میں شَرابور بہت
ضامن جعفری