ٹیگ کے محفوظات: کرا

اُس غزل چَشم کو رُولا ہی دے

عشق کے حق میں کچھ گواہی دے
اُس غزل چَشم کو رُولا ہی دے
اے سَرِشک! اے سفیِرِ خاموشی
آج تُو نُطق کو ہَرا ہی دے
کب تلک روز روز کی قَسمیں
ایک دن داغِ دِل دِکھا ہی دے
اُس سے شکوہ دَبی زبان سے کر
یہ نہ ہو بزم سے اُٹھا ہی دے
وہ تغافل پہ مائل اَور اِدَھر
ہَر نیا زخم اِک مزا ہی دے
جاؤ! لا کَر دِکھاؤ! ایسا دِل
جو دُکھے جائے اُور دُعا ہی دے
کوئی اُس سے کہے یہ ہیں ضامنؔ
پِھر تعارف مِرا کَرا ہی دے
ضامن جعفری