ٹیگ کے محفوظات: ڈھہہ

دُکھاپنے ہَوا سے کہہ رہا ہے

پروین شاکر ۔ غزل نمبر 119
سناّٹا فضا میں بہہ رہا ہے
دُکھاپنے ہَوا سے کہہ رہا ہے
برفیلی ہوا میں تن شجر کا
ہونے کا عذاب سہہ رہا ہے
باہر سے نئی سفیدیاں ہیں
اندر سے مکان ڈھہہ رہا ہے
حل ہو گیا خون میں کُچھ ایسے
رگ رگ میں وہ نام بہہ رہا ہے
جنگل سے ڈرا ہُوا پرندہ
شہروں کے قریب رہ رہا ہے
پروین شاکر