ٹیگ کے محفوظات: ٹھہرے

کُتا بھونکے تو آگے سے بھونکے کون

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 13
منصبِ انسانی سے نیچے اترے کون
کُتا بھونکے تو آگے سے بھونکے کون
وہ کہ جو نیّتِ بد کے بطن سے پھوٹی ہو
تاب کسے ہے اُس دلدل میں الجھے کون
جز پت جھڑ کے اِس فن کا ادراک کسے
رنگ کسی کا جیسا بھی ہو بدلے کون
جسم پہ جس کے لباس ہو جھاڑ میں کانٹوں کے
حفظِ گلاب و سمن کی دُھن میں کودے کون
کون ہو جو خّرم ہو لہو میں نہا کر بھی
پیغمبر کے سوا طائف میں ٹھہرے کون
کام نہیں بس میں یہ دئیے کے ناخن کے
چہرۂ شب سے ماجدؔ ظلمت کھُرچے کون
ماجد صدیقی

لگائے جائیں ہزار پہرے، ہوا نہ ٹھہرے

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 2
مثالِ سیلِ بلا نہ ٹھہرے، ہوا نہ ٹھہرے
لگائے جائیں ہزار پہرے، ہوا نہ ٹھہرے
کہیں کہیں دھوپ چھپ چھپا کر اُتر ہی آئی
دبیز بادل ہوئے اکہرے، ہوا نہ ٹھہرے
ورق جب اُلٹے، کتابِ موسم دکھائے کیا کیا
گلاب عارض، بدن سنہرے، ہوا نہ ٹھہرے
وہ سانس اُمدی کہ وہ حسوں نے غضب میں آ کر
گرا دئیے جس کے کٹہرے، ہوا نہ ٹھہرے
کبھی بدن کے روئیں روئیں میں حواس ابھریں
کبھی کرے گوشِ ہوش بہرے، ہوا نہ ٹھہرے
اسی کی رفتارِ پا سے ابھریں نقوش رنگیں
کہیں پہ ہلکے، کہیں پہ گہرے، ہوا نہ ٹھہرے
صدائے ہر سُو کے گنبد ہیں گونجتی ہے
ہوا نہ ٹھہرے، ہوا نہ ٹھہرے، ہوا نہ ٹھہرے
آفتاب اقبال شمیم