ٹیگ کے محفوظات: ٹکرائی

ہر گُلِ تر کی آنکھ بھر آئی

میرے دل کی کَلی جو مُرجھائی
ہر گُلِ تر کی آنکھ بھر آئی
پھر ہوئی روشنی خلاؤں میں
پھر کسی بے وفا کی یاد آئی
جُھک گئیں مل کے شرم سے نظریں
اک نئے موڑ پر حیات آئی
ان کی قُربت بھی بار ہے دلبر
کس قدر ہے لطیف تنہائی
اُٹھ گیا اعتبار منزل کا
دیکھ لی رہبروں کی دَانائی
ان کی چاہت بھی اب نہیں منظور
تھے کبھی ہم بھی ان کے سودائی
بے خطر حادثوں سے ٹکرایا
یوں مرے عزم نے جِلا پائی
عزم نے زندگی کو جیت لیا
اپنی پستی پہ موت شرمائی
ڈر کے پیچھے کھسک گیا ساحل
یوں جزیرے سے ناو ٹکرائی
مجھ کو احساسِ غم، شکیبؔ، نہ تھا
ان کو دیکھا تو آنکھ بھر آئی
شکیب جلالی

چشمِ مے گوں تری یاد آئی ہے

جب بھی گُلشن پہ گھٹا چھائی ہے
چشمِ مے گوں تری یاد آئی ہے
کس کے جلووں کو نظر میں لاؤں
حسن خود میرا تماشائی ہے
آپ کا ذکر نہیں تھا لیکن
بات پر بات نکل آئی ہے
زندگی بخش عزائم کی قسم
ناؤ ساحل کو بہا لائی ہے
مرگ و ہستی کا مٹا کر احساس
زندگی موت سے ٹکرائی ہے
مجھ کو دنیا کی محبت پہ، شکیبؔ
اکثر اوقات ہنسی آئی ہے
شکیب جلالی

سجناں دے شیشے سنگ شیشہ، اِنج تے نئیں ٹکرائی دا

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 53
ڈوہل کے ساڈے جاموں جنج، دسیا جے مُنہ رُسوائی دا
سجناں دے شیشے سنگ شیشہ، اِنج تے نئیں ٹکرائی دا
سَنگھاں وچ، سیندھور دے دُھوڑے وانگوں، لہو رُک چلیا اے
چِنتاں پاروں، ساہ ٹُٹیا اِنج، سدھراں دی شہنائی دا
ہاں ہاں تُساں، جو کجھُ کیتا، انت نوں، اِنج ائی ہونا سی
سانجھ نہ رکھنی ہووے تے، بھُل مگروں نئیں شرمائی دا
سنگت نُوں سنگت رکھیا جے، لہو دی سانجھ نہ کریا جے
نام نہ لکھوایا جے، مَتھڑے تے، یوسف دے بھائی دا
اَساں تے کَسّے جنج سجناں، تُساں تِیر نگاہواں دے
وچھڑی کُونج نُوں، بالاں وانگوں، اِنج تے نئیں زخمائی دا
اپنے ول بلایا تُساں، جنج ونگار کے بدلاں نُوں
ڈبن تُوں پہلاں ماجدُ جی، اِنج ائی ہتھ لہرائی دا
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)