ٹیگ کے محفوظات: وہی کشفِ ذات کی آرزو

وہی کشفِ ذات کی آرزو

مرا دل گرو، مری جاں گرو!

چلا آ کہ ہے مرا در کھلا

تو مرا نصیب ہے راہرو!

یہ ہوا، یہ برق، یہ رعد و ابر، یہ تیرگی

رہِ انتظار کی نارسی

مرے جان و دل پہ ہیں تو بتو

مرے میہماں ، مرے راہرو!

اے گریز پیا، تو سرابِ دشتِ خلا نہ بن

وہ نوا نہ بن جو فریبِ راہگزار ہو

وہ فسونِ ارض و سما نہ بن

جسے دل گرفتوں سے عار ہو!

جو تجھے بلاتی ہے پے بہ پے

وہ صدا جلاجلِ جاں کی ہے

وہ صدا مرورِ زماں کی ہے!

کسے اس صدا سے فرار ہو؟

مرا دل گرو، مری جاں گرو

تری کُن مکُن، تری رَو مرَو

مجھے بارِ جاں،

کہ میں حرف جس کی رواں ہے تو

تو کلام ہے، میں تری زباں

تو وہ شمع ہے کہ میں جس کی لو!

کسی نقش کار کا اِک نفس ۔۔۔

کئی صورتیں جو سدا سے تشنہ ءِ رنگ تھیں

ہوئیں وصل معنی سے بارور

کسی بت تراش کی اِک نگہ ۔۔۔

کئی سنگ اذیتِ یاس و مرگ

سے بچ گئے

ہوئے سمتِ راہ سے باخبر!

چلا آ کہ میری ندا میں بھی

وہی رویتِ ازلی کہ ہے

جسے یاد غایتِ رنگ و بُو

جسے یاد رازِ مئے و سبو

جسے یاد وعدہ ءِ تار و پو!

چلا آ کہ میری ندا میں بھی

اسی کشفِ ذات کی آرزو!

ن م راشد