ٹیگ کے محفوظات: ولی

رہِ حرم نہ سہی یہ تری گلی بھی نہیں

سُکوں نہیں ہے، مگر اب وہ بے کلی بھی نہیں
رہِ حرم نہ سہی یہ تری گلی بھی نہیں
ہَواے شہر سے کیوں آئے بُوے رُسوائی
کہ موجِ راز کبھی ناز سے چلی بھی نہیں
ابھی کہاں شبِ وعدہ کے سرمئی آثار
ابھی تو دھوپ درِ یار سے ڈھلی بھی نہیں
ہم اپنی روشنیِ دل پہ کیوں نہ نازاں ہوں
کہ شمعِ درد، دلِ غیر میں جَلی بھی نہیں
نگاہِ رنگ کے جادو پہ مرمٹے لیکن
گُلِ حیات فقط رنگ کی ڈلی بھی نہیں
شکیب جلالی

مظہر ہے چمن کی تشنگی کا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 155
اُترا ہے جو منہ کلی کلی کا
مظہر ہے چمن کی تشنگی کا
پھٹنے کو ہے کیا کوئی پٹاخہ
کیوں شور تھما لگے گلی کا
اوہام فنا نظر میں رقصاں
تحفہ ہے یہ عمر ادھ ڈھلی کا
دیکھا کوئی گُل تو یاد آیا
ہنسنا کسی ناز کی پلی کا
اس شوخ کا جسم ہے کہ ماجدؔ
موزوں کوئی شعر ہے ولیؔ کا
ماجد صدیقی

اپنا لی ہوس والوں نے جو رسم چلی ہے

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 4
میخانوں کی رونق ہیں ، کبھی خانقہوں کی
اپنا لی ہوس والوں نے جو رسم چلی ہے
دلداریِ واعظ کو ہمیں باقی ہیں ورنہ
اب شہر میں ہر رندِ خرابات ولی ہے
قطعہ
فیض احمد فیض

اپنالی ہوس والوں نے جو رسم چلی ہے

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 42
میخانے کی رونق ہیں کبھی خانقہوں کی
اپنالی ہوس والوں نے جو رسم چلی ہے
دلداریء واعظ کو ہمیں باقی ہیں ورنہ
اب شہر میں ہر رندِ خرابات ولی ہے
فیض احمد فیض