ٹیگ کے محفوظات: نکلی

شام کوئی اُس کی آنکھوں میں کاجل جیسی شام

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 10
وقت دکھا دے شاید کوئی بھولی بسری شام
شام کوئی اُس کی آنکھوں میں کاجل جیسی شام
چہرہ چہرہ سہم سے یوں بیدم ہے جیسے آج
جسم چچوڑنے آئی ہو نگری میں اُتری شام
سُکھ سپنوں کے پیڑ پہ ہے پھر چڑیوں جیسا شور
پھر پھنکار اُٹھی جیسے ناگن سی بپھری شام
کرب و الم کا نحس گہن یوں دن پر پھیل گیا
آج کی شام سے آن ملی محشر سی گزری شام
کیا کیا حدّت کس کس ذرّے نے ہتھیائی ہے
پوچھ کے آئی سورج کے پہلو سے نکلی شام
مٹتی ہے کب ہاتھوں سے لیکھوں کی یہ تحریر
ڈھلتی ہے کب جانے انگناں انگناں ٹھہری شام
لطف و کرم سے بیگانہ اور زہرِحسد سے چُور
سوتیلی ماؤں سی ماجدؔ یہ کیا آئی شام
ماجد صدیقی

مایوس نظر ہے در کی طرف اور جان نکلی جاتی ہے

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 139
سانس ان کے مریضِ حسرت کی رک رک کے چلی جاتی ہے
مایوس نظر ہے در کی طرف اور جان نکلی جاتی ہے
چہرے سے سرکتی جاتی ہے زلف ان کی خواب کے عالم میں
وہ ہیں کہ ابھی تک ہوش نہیں اور شب ہے کہ ڈھلی جاتی ہے
اللہ خبر بجلی کو نہ ہو گلچیں کی نگاہِ بد نہ پڑے
جس شاخ پہ تنکے رکھے ہیں وہ پھولتی پھلتی جاتی ہے
عارض پہ نمایاں خال ہوئے پھر سبزۂ خط آغاز ہوا
قرآں تو حقیقت میں ہے وہی تفسیر بدلتی جاتی ہے
توہینِ محبت بھی نہ رہی وہ جورو ستم بھی چھوٹ گئے
پہلے کی بہ نسبت حسن کی اب ہر بات بدلتی جاتی ہے
لاج اپنی مسیحا نے رکھ لی مرنے نہ دیا بیماروں کو
جو موت نہ ٹلنے والی تھی وہ موت بھی ٹلتی جاتی ہے
ہے بزمِ جہاں میں ناممکن بے عشق سلامت حسن رہے
پروانے تو جل کر خاک ہوئے اب شمع بھی جلتی جاتی ہے
شکوہ بھی اگر میں کرتا ہوں تو جورِ فلک کا کرتا ہوں
بے وجہ قمر تاروں کی نظر کیوں مجھ سے بدلتی جاتی ہے
قمر جلالوی