ٹیگ کے محفوظات: موڑنا

جوکھل نہیں سکا دروازہ توڑنا ہے مجھے

منصور آفاق ۔ غزل نمبر 592
اجل پہننی ہے بھونچال اوڑھنا ہے مجھے
جوکھل نہیں سکا دروازہ توڑنا ہے مجھے
کسی سے میلوں پرے بیٹھ کر کسی کے ساتھ
تعلق اپنی نگاہوں کا جوڑنا ہے مجھے
نکالنا ہے غلاظت کو زخم کے منہ سے
یہ اپنے ملک کا ناسور پھوڑنا ہے مجھے
کسی کا لمس قیامت کا چارم رکھتا ہے
مگر یہ روز کا معمول توڑنا ہے مجھے
مجھے زمیں کو تحفظ فراہم کرنا ہے
رخ آسمانی بلاؤں کا موڑنا ہے مجھے
فش اینڈ چپس سے اکتا گیا ہوں اب منصور
بس ایک ذائقے کا وصل چھوڑنا ہے مجھے
منصور آفاق