ٹیگ کے محفوظات: مدغم

سورج نے کھُلی آنکھ سے ہے کم ہمیں دیکھا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 31
شاخیں یہی کہتی ہیں، نہ بے دم ہمیں دیکھا
سورج نے کھُلی آنکھ سے ہے کم ہمیں دیکھا
ژالوں سے بچے ہیں تو ہوا نوچنے آئی
اِس خاک نے ہر حال میں برہم ہمیں دیکھا
ہر دیکھنے والے نے دھند لکوں میں حسد کے
مہتابِ سرِ صبح سا، مدّھم ہمیں دیکھا
ماجد ہوئے ہم اوس ، گیاہِ لبِ جو کی
ہر شخص نے ندیا ہی میں مدغم ہمیں دیکھا
ماجد صدیقی

بادل نے جہاں بھی کہیں بے نم ہمیں دیکھا

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 21
شاہوں ساجو دیکھا بھی تو ہے کم ہمیں دیکھا
بادل نے جہاں بھی کہیں بے نم ہمیں دیکھا
منشا تھی ہر اوتار کی اِتنی سی کہ اُس نے
مسرور تھا جب بھی، بہ سرِ خم ہمیں دیکھا
ہر تُند بگولے نے ہر اِک سیلِ غضب نے
دیکھا بھی تو تنکوں ہی سا برہم ہمیں دیکھا
ہر دیکھنے والے نے دھندلکے میں حسد کے
مہتابِ سرِ صبح سا مدّھم ہمیں دیکھا
ماجدؔ ہوئے ہم اوس کنارِ لبِ جُو کی
ہر موج نے ندیا ہی میں مدغم ہمیں دیکھا
ماجد صدیقی

کون کہے یہ رنج نظر کا کب جا کر کم ہونا ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 60
جب تک گرد گُلوں پر ہے اِن آنکھوں کو نم ہونا ہے
کون کہے یہ رنج نظر کا کب جا کر کم ہونا ہے
رفتہ رفتہ اندر سے دیمک سا اُنہیں جو چاٹ سکے
ایمانوں میں زہر ریا کا اور ابھی ضم ہونا ہے
جانے کب تک ٹوہ لگانے اِک اِک جابر موسم کی
دل کو ساغر میں ڈھلنا ہے اور ہمیں جم ہونا ہے
ایک خُدا سے ہٹ کر بھی کچھ قادر راہ میں پڑتے ہیں
جن کی اُونچی دہلیزوں پر اِس سر کو خم ہونا ہے
آگے کی یہ بات کہاں بتلائے لُغت اُمیدوں کی
کان میں پڑنے والے کن کن لفظوں کو سم ہونا ہے
اور طرح سے بدلے دیکھے اَبکے گھاٹ مچانوں میں
تیروں پر تحریر جہاں ہر آہو کا رَم ہونا ہے
دل کو جو بھی آس لگی وُہ خوابِ جِناں بن جائے گی
دریاؤں کو جیسے ماجدؔ بحر میں مدغم ہونا ہے
ماجد صدیقی