ٹیگ کے محفوظات: لائیے

اُس پہ کوئی نظم پِھر لکھ لایئے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 49
کرب کوئی سوچ کر سو جایئے
اُس پہ کوئی نظم پِھر لکھ لایئے
آپ بِن چاہے جو طوطے بن گئے
اِک سبق ہی زیست بھر دُہرائیے
لا کے پنجوں میں کہاں چھوڑے گا باز
یہ رعایت ذہن میں مت لائیے
پُوری کشتی ہو شکنجے میں تو پھر
کُود کر گرداب ہی میں جایئے
پھیلئے تو مثلِ خُوشبو پھیلئے
چھایئے تو ابر بن کر چھایئے
آپ سے بہتر ہو گر نسل آپ کی
اور کسی حاصل کو مت للچایئے
تُم کہ ماجِد ابکے امریکہ میں ہو
گُن کُچھ اپنے بھی یہاں گِنوایئے
ماجد صدیقی

لیکن جو ہو چکی وہ خطا مان جائیے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 16
سچّے ہو گر تو اور نہ آنکھیں چُرائیے
لیکن جو ہو چکی وہ خطا مان جائیے
کیو ں وقتِگفتگو ہے نگاہوں میں اضطراب
زیرِ زباں ہے جو وہ زباں پر بھی لائیے
میں پُھول بھی ہوں گر تو بگولوں کی زد پہ ہوں
میں کھو چکا حواس مرے منہ نہ آئیے
کھینچے جو اپنی سمت اُنہیں بھی جو دُور ہیں
ایسا بھی کوئی پُھول سرِ لب کِھلائیے
لَو دے اٹھے گلاب نہ آخر سرِحجاب
اس طور بھی نہ روئے درخشاں چھپائیے
ماجد صدیقی

ٹھہرا جب احتجاج تو کھُل کر منائیے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 93
پتلے روِش روِش پہ خزاں کے جلائیے
ٹھہرا جب احتجاج تو کھُل کر منائیے
حاصل بہ عجز رتبہ مبارک ہو یہ تمہیں
میں ہوں انا شکار مرے منہ نہ آئیے
پھر دیکھنا حصولِ گلِ تر کے خواب بھی
دامن تو پہلے باڑھ سے اپنا چھڑائیے
دعویٰ ہے تازگی کا درونِ قفس یہی
سر پھوڑ پھوڑ اپنا لُہو میں نہائیے
ماجدؔ یہ تن نہ مثلِ گریباں ہو چاک چاک
دل میں جو زہر ہے وہ زباں پر بھی لائیے
ماجد صدیقی