ٹیگ کے محفوظات: فزوں

خیمہِ گُل کے پاس ہی‘ دجلہِ خوں بھی چاہیے

موجِ صبا رواں ہوئی‘ رقصِ جنوں بھی چاہیے
خیمہِ گُل کے پاس ہی‘ دجلہِ خوں بھی چاہیے
کشمکشِ حیات ہے‘ سادہ دلوں کی بات ہے
خواہشِ مرگ بھی نہیں ‘ زہرِ سکوں بھی چاہیے
ضربِ خیال سے کہاں ٹوٹ سکیں گی بیڑیاں
فکرِ چمن کے ہم رکاب‘ جوشِ جنوں بھی چاہیے
نغمہِ شوق خوب تھا‘ ایک کمی ہے مُطربہ!
شعلہِ لَب کی خیر ہو‘ سوزِ دُروں بھی چاہیے
اتنا کرم تو کیجیے‘ بُجھتا کنول نہ دیجیے
زخمِ جگر کے ساتھ ہی دردِ فزوں بھی چاہیے
دیکھیے ہم کو غور سے‘ پوچھیے اہلِ جور سے
روحِ جمیل کے لیے‘ حالِ زُبوں بھی چاہیے
شکیب جلالی

بات کرنا نہیں آتی ہے تو کیوں بولتا ہے؟

تیرے لہجے میں ترا جہلِ دروں بولتا ہے
بات کرنا نہیں آتی ہے تو کیوں بولتا ہے؟
پھونک دی جاتی ہے اس طرح مرے شعر میں روح
جیسے سانسوں میں کوئی کن فیکوں بولتا ہے
سننے والوں پہ مرا حال عیاں ہو کیسے
عشق ہوتا ہے تو وحشت میں سکوں بولتا ہے
تیرا اندازِ تخاطب، ترا لہجہ، ترے لفظ
وہ جسے خوفِ خدا ہوتا ہے، یوں بولتا ہے؟
عقل اس باب میں خاموش ہی رہتی ہے جناب
جب ہو موضوع حقیقت تو جنوں بولتا ہے
گفتگو کیا ہو کہ جب گویا ہوں آنکھیں تیری
چپ سی لگ جاتی ہے جب ان کا فسوں بولتا ہے
کوئی عرفان کو سمجھائے، یہ آشفتہ مزاج
جاں کا خطرہ ہو تو پہلے سے فزوں بولتا ہے
عرفان ستار

عِشق بے نِسبَتِ "کُن” خُود "فَیَکُوں ” ہے یُوں ہے

اِس کی تَوجیہہ عَبَث ہے کہ یہ یُوں ہے یُوں ہے
عِشق بے نِسبَتِ "کُن” خُود "فَیَکُوں ” ہے یُوں ہے
اَپنی پہچان پَہ مائِل ہے بہت رُوحِ حیات
ہَر طَرَف شورِ اَنالحق جو فزوں ہے یُوں ہے
زُعمِ دانائی کو اِدراکِ حَقیقَت تھا مُحال
یہ مِرا صَدقَہِ اَندازِ جُنوں ہے یُوں ہے
تُم نے دیکھی ہی نہیں ہے تَپِشِ دَشتِ خَیال
ذِہن کی آبلہ پائی جو فُزوں ہے یُوں ہے
بحرِ مَوّاجِ بَشَر اَپنی حَقیِقَت کو نَہ بُھول
سَرحَدِ عِجز پَہ تُو قَطرَہِ خُوں ہے یُوں ہے
اَز اَزَل تا بَہ اَبَد خالِق و مَخلُوق کا کھیل
ہَم یہی سُنتے چَلے آئے ہیں کیوں ہے یُوں ہے
عَدل و اِنصاف کی تعریف مُکَمَّل کَر دُوں
حُکم اُس کا ہے مِرا صَبر و سُکوں ہے یُوں ہے
میں وہی ہُوں کہ جو تھا، تُجھ کو لگا ہُوں بہتَر
صَیقَلِ آئینَہِ ظَرف فُزوں ہے یُوں ہے
حُسن آمادَہِ اِظہارِ نَدامَت ہے ضَرور
عشق کے سامنے یہ سر جو نِگوں ہے یُوں ہے
مُشتِ خاک اَور یہ ہَنگامَہِ ہَستی ضامنؔ!
قید میں رُوح کا اِک رَقصِ جُنوں ہے یُوں ہے
ضامن جعفری

کیا اہلِ خِرد کیفِ جنوں ڈھونڈ رہے ہیں

اِس عالمِ وحشت میں سکوں ڈھونڈ رہے ہیں
کیا اہلِ خِرد کیفِ جنوں ڈھونڈ رہے ہیں
قاتل بھی ہے خنجر بھی ہے موجود مگر لوگ
مقتول کے ہاتھوں ہی پہ خوں ڈھونڈ رہے ہیں
اے ظرفِ تنک مایَہِ دنیائے دَنی، ہم
ظرف اب کوئی وسعت میں فزوں ڈھونڈ رہے ہیں
پس منظرِ "کُن” کیا تھا ہمیں بھی تو ہو معلوم
ہم لمحہِ قبل از "فَیَکُوں” ڈھونڈ رہے ہیں
معلوم نہیں حلقہِ احباب میں ضامنؔ
وہ چیز جو ناپید ہے کیوں ڈھونڈ رہے ہیں
ضامن جعفری

بات کرنا نہیں آتی ہے تو کیوں بولتا ہے؟

عرفان ستار ۔ غزل نمبر 76
تیرے لہجے میں ترا جہلِ دروں بولتا ہے
بات کرنا نہیں آتی ہے تو کیوں بولتا ہے؟
پھونک دی جاتی ہے اس طرح مرے شعر میں روح
جیسے سانسوں میں کوئی کن فیکوں بولتا ہے
سننے والوں پہ مرا حال عیاں ہو کیسے
عشق ہوتا ہے تو وحشت میں سکوں بولتا ہے
تیرا اندازِ تخاطب، ترا لہجہ، ترے لفظ
وہ جسے خوفِ خدا ہوتا ہے، یوں بولتا ہے؟
عقل اس باب میں خاموش ہی رہتی ہے جناب
جب ہو موضوع حقیقت تو جنوں بولتا ہے
گفتگو کیا ہو کہ جب گویا ہوں آنکھیں تیری
چپ سی لگ جاتی ہے جب ان کا فسوں بولتا ہے
کوئی عرفان کو سمجھائے، یہ آشفتہ مزاج
جاں کا خطرہ ہو تو پہلے سے فزوں بولتا ہے
عرفان ستار