ٹیگ کے محفوظات: عظیم

یا رب ادھر بھی بھیج دے جھونکا نسیم کا

مصطفٰی خان شیفتہ ۔ غزل نمبر 8
خواہاں ہوں بوئے باغِ تنزہ شمیم کا
یا رب ادھر بھی بھیج دے جھونکا نسیم کا
تیرے گدا کو سلطنتِ جم سے کیا، کہ ذوق
ہے کاسۂ شکستہ میں جامِ دو نیم کا
نیرنگِ جلوہ، بارقۂ ہوش سوز ہے
کیا امتیاز رنگ سے کیجے شمیم کا
تیری نسیم لطف سے گل کو شگفتگی
وابستہ تیرے حکم پہ چلنا نسیم کا
واجب کی حکمت آئے گی ممکن کی عقل میں؟
کتنا دماغ ہے خلل آگیں حکیم کا
دقت سے پہلے عجز سلامت کی راہ ہے
کیسا سپاس دار ہوں عقلِ سلیم کا
میری فنا ہے مشعلۂ محفلِ بقا
پروانہ ہوں میں پرتوِ شمعِ قدیم کا
گر تیرے شوق میں ہیں یہی بے قراریاں
لے لوں گا بوسہ پایۂ عرشِ عظیم کا
طاعت اگر نہیں تو نہ ہو یاس کس لئے
وابستۂ سبب ہے کرم کب کریم کا
جس وقت تیرے لطف کے دریا کو جوش آئے
فوارۂ جناں ہو زبانہ جحیم کا
اے شیفتہ عذابِ جہنم سے کیا مجھے
میں اُمتی ہوں نار و جناں کے قسیم کا
مصطفٰی خان شیفتہ

تری داستاں بھی عظیم ہے، مری داستاں بھی عظیم ہے

مجید امجد ۔ غزل نمبر 55
ترے فرقِ ناز پہ تاج ہے، مرے دوشِ غم پہ گلیم ہے
تری داستاں بھی عظیم ہے، مری داستاں بھی عظیم ہے
مری کتنی سوچتی صبحوں کو یہ خیال زہر پلا گیا
کسی تپتے لمحے کی آہ ہے کہ خرامِ موجِ نسیم ہے
تہہِ خاک کرمکِ دانہ جُو بھی شریکِ رقصِ حیات ہے
نہ بس ایک جلوۂ طور ہے، نہ بس ایک شوقِ کلیم ہے
یہ ہر ایک سمت مسافتوں میں گندھی پڑی ہیں جو ساعتیں
تری زندگی، مری زندگی، انہی موسموں کی شمیم ہے
کہیں محملوں کا غبار اڑے، کہیں منزلوں کے دیے جلیں
خَمِ آسماں، رہِ کارواں! نہ مقام ہے، نہ مقیم ہے
حرم اور دیر فسانہ ہے، یہی جلتی سانس زمانہ ہے
یہی گوشۂ دلِ ناصبور ہی کنجِ باغِ نعیم ہے
مجید امجد

یک ہزار ماہ سے عظیم رات

منصور آفاق ۔ غزل نمبر 140
روشنی کی روح میں مقیم رات
یک ہزار ماہ سے عظیم رات
سجدہِ گاہِ شام کی مجھے قسم
مہر نیم روز کی حریم رات
سہہ پہر نکھر رہی تھی ہر طرف
گار ہاتھا چاند راگ بھیم رات
نت نئی ترنگ سے کرے نزول
قرن ہا قرن سے قدیم رات
باغ میں گلاب بھی اداس تھا
چاند کے بغیر تھی یتیم رات
دل میں حمد حمد کے چراغ تھے
آنکھ میں تھی نور نور میم رات
بار بار آئے میرے صحن میں
وہ کریم اور وہ رحیم رات
منصور آفاق