ٹیگ کے محفوظات: طلسمِ ازل

طلسمِ ازل

مجھے پھر طلسمِ ازل نے

نئی صبح کے نور میں نیم وا،

شرم آگیں دریچے سے جھانکا!

میں اس شہر میں بھی،

جہاں کوئے و برزن میں بکھرے ہوئے

حُسن و رقص و مَے و نور و نغمہ

اُسی نقشِ صد رنگ کے خط و محراب ہیں، تار و پو ہیں،

کہ صدیوں سے جس کے لیے

نوعِ انساں کا دل، کان، آنکھیں،

سب آوارہ ءِ جستجو ہیں،

میں اس شہر میں تھا پریشان و تنہا!

یہاں زندگی ہے اک آہنگِ تازہ،

مسلسل، مگر پھر بھی تازہ

یہاں زندگی لمحہ لمحہ، نئے، دم بہ دم تیز تر

جوش سے گامزن ہے،

یہاں وہ سکوں، جس کے گہوارہ ءِ نرم و نازک

میں پلتے ہیں ہم ایشیائی

فقط دور ہی دور سے خندہ زن ہے،

مگر میں اسی شہر میں تھا پریشان و غمگین و تنہا!

پریشان و غمگین و تنہا

کہ ہم ایشیائی

جو صدیوں سے ہیں خوابِ تمکیں کے رسیا

یہ کہتے رہے ہیں:

ہمارا لہو زخمِ افرنگ کی مومیائی

ہمارے ہی دم سے جلالِ شہی، فرّہ ءِ کبریائی!

پریشان و غمگین و تنہا

کہ ہم تابکے اپنے اوہامِ کہنہ کے دلبند بن کر،

یونہی عافیت کی پُر اسرار لذت کے آغوش سے

زہرِ تقدیر پیتے رہیں گے

ابھی اور کَے سال دریوزہ گر بن کے جیتے رہیں گے!

اسی سوچ میں تھا کہ مجھ کو

طلسمِ ازل نے نئی صبح کے نور میں نیم وا،

شرم آگیں دریچے سے جھانکاِ___

مگر اس طرح، ایک چشمک میں جیسے

ہمالہ میں الوند کے سینہ ءِ آہنی سے

محبت کا اک بے کراں سیل بہنے لگا ہو

اور اس سیل میں سب ازل اور ابد مل گئے ہوں!

ن م راشد