ٹیگ کے محفوظات: سنّاٹا

جُگ بیتے وہ شخص نہیں ہے دیکھا جیسے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 34
آنکھوں میں آباد ہے ویرانہ سا جیسے
جُگ بیتے وہ شخص نہیں ہے دیکھا جیسے
کوئی چکور نہیں آتا ہے اُڑ کر ہم تک
ہم تنہا ہیں آسمان پر چندا جیسے
جب سے باغ نے ابر سے ہم آغوشی چاہی
اُڑنے لگا وہ اور بھی، اور بھی اُونچا جیسے
چھنی سماعت سے جب سے بُوندوں کی آہٹ
چاروں اور ہے ہیبت زا سنّاٹا جیسے
جب سے ماجِد عمر کی پت جھڑ زوروں پر ہے
گرد آلود ہُوئی ہر ایک تمنّا جیسے
ماجد صدیقی

میں جو گزرے ہوئے ہنگاموں کا خمیازا ہوں

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 139
دیکھ لے، آج تری بزم میں بھی تنہا ہوں
میں جو گزرے ہوئے ہنگاموں کا خمیازا ہوں
جانے کیا ٹھان کے اُٹھتا ہوں نکلنے کے لیے
جانے کیا سوچ کے دروازے سے لوٹ آتا ہوں
میرے ہر جزو کا ہے مجھ سے الگ ایک وجود
تم مجھے جتنا بگاڑو گے میں بن سکتا ہوں
مجھ میں رَقصاں کوئی آسیب ہے آوازوں کا
میں کسی اُجڑے ہوئے شہر کا سنّاٹا ہوں
اپنا ہی چہرہ اُنہیں مجھ میں دِکھائی دے گا
لوگ تصویر سمجھتے ہیں میں آئینہ ہوں
لمحۂ شوق ہوں، میری کوئی قیمت ہی نہیں
میں میسر تجھے آجاؤں تو مہنگا کیا ہوں
میں جھپٹنے کے لیے ڈُھونڈھ رہا ہوں موقع
اور وہ شوخ سمجھتا ہے کہ شرماتا ہوں
عرفان صدیقی