ٹیگ کے محفوظات: سنائیے

مرے وسوسوں مرے واہموں کو مٹائیے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 87
پۓ لطف یا پۓ جور جیسے بھی آئیے
مرے وسوسوں مرے واہموں کو مٹائیے
ہمہ دم ہی صور نہ پھُونکئے سرِ انجمن
کبھی کوئی قصّۂ جاں فزا بھی سنائیے
میں ترس رہا ہوں کتابِ سبز بہار کو
مرے ہاتھ اِس کا وَرق وَرق نہ تھمائیے
پۓ انتقام، ستم میں بخل نے کیجیئے
کہ یہ زہرہے تو نہ جرعہ جرعہ پلائیے
کبھی کھولئے کسی کنجِ لطف کا باب بھی
بہ کنارِ گلشنِ آرزُو نہ پھرائیے
ہے علیلِ دید تمہارا ماجدِؔ خستہ جاں
کسی روز صورتِ موجِ باد ہی آئیے
ماجد صدیقی

عَلَم جو لے کے چلے تھے اٹھائیے اَب بھی

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 98
بھٹک گئے تھے تو کیا لوٹ آئیے اب بھی
عَلَم جو لے کے چلے تھے اٹھائیے اَب بھی
وہ جس کی لَے پہ کبھی دل سبھی کے دَھڑکے تھے
بہ صِدقِ دل وہی نغمہ سنائیے اَب بھی
وہ جس کی لَو پسِ ہر لب سسک رہی ہے ابھی
دِیا وہ ہاتھ میں لے کر جلائیے اَب بھی
نفس نفس کو جو پھر حدّتِ جنوں بخشے
وہ شعبدہ سرِ محفل دکھائیے اَب بھی
اک ایک رَہ کو منّور کیا تھا جس نے کبھی
جبیں جبیں پہ وُہی ضَو سجائیے اَب بھی
وہ آرزو کہ جو تشنہ ہے آج تک ماجدؔ
وُہی بہ شکلِ غزل گنگنائیے اَب بھی
ماجد صدیقی