ٹیگ کے محفوظات: سمندر کی تہہ میں

سمندر کی تہہ میں

ن م راشد

مجموعہ کلام گماں کا ممکن

سمندر کی تہہ میں

سمندر کی سنگین تہہ میں

ھے صندوق

صندوق میں ایک ڈبیا میں ڈبیا

میں ڈبیا

میں کتنے معانی کی صُبحیں

وہ صُبحیں کہ جن پر رسالت کے دَر بند

اپنی شعاعوں میں جکڑی ھوُئی

کتنی سہمی ھوُئی !

یہ صندوق کیوں کر گِرا؟

نہ جانے کِسی نے چُرایا؟

ھمارے ھی ھاتھوں سے پِھسلا؟

پِھسل کر گِرا؟

سمندر کی تہہ میں مگر کب؟

ھمیشہ سے پہلے

ھمیشہ سے بھی سالہا سال پہلے؟

اور اب تک ھے صندوق کے گِرد

لفظوں کی راتوں کا پہرا

وہ لفظوں کی راتیں

جو دیووں کی مانند

پانی کے لسداد دیووں کے مانند !

یہ لفظوں کی راتیں

سمندر کی تہہ میں تو بستی نہیں ھیں

مگر اپنے لاریب پہرے کی خاطر

وھیں رینگتی ھیں

شب و روز

صندوق کے چار سوُ رینگتی ھیں

سمندر کی تہہ میں !

بہت سوچتا ھوُں

کبھی یہ معانی کی پاکیزہ صُبحوں کی پریاں

رھائی کی اُمید میں

اپنے غوّاص جادوُگروں کی

صدائیں سُنیں گی؟

ن م راشد