ٹیگ کے محفوظات: سجھائی

ذرا سی دھول چَھٹے راستہ سجھائی تو دے

جنوں کو دامِ خِرد سے کبھی رہائی تو دے
ذرا سی دھول چَھٹے راستہ سجھائی تو دے
میں بندگی کو بھی نادیدہ رفعتیں دے دُوں
وہ ایک پل کے لیے ہی مجھے خدائی تو دے
سکوتِ مرگ ہو کیسے حیات کا قائل
کبھی کبھی کوئی آوازِ پا سُنائی تو دے
یہ کیا کہ چھوڑ دیا نائبِ خدا کہہ کر
بشر کو اوجِ بشر تک کبھی رسائی تو دے
ابھی نہ دعویِٰ تکمیلِ عشق کر ضامنؔ
نظر کو منزلِ جذب و فنا دِکھائی تو دے
ضامن جعفری

اور معالج بہم عطائی مجھے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 20
دی نہیں کرب سے رہائی مجھے
اور معالج بہم عطائی مجھے
ہاں وہی تو ہے حیثیت میری
تھی جو ابلس نے سُجھائی مجھے
ابنِ آدم ہوں مَیں صدف تو نہیں
رزق بخشا ہے کیوں ہوائی مجھے
اُس خدا تک کا میں ہوا منکر
جس نے دی خلق پر خدائی مجھے
گھر کے بد خصلتوں میں بھی ماجِد!
کرنی آئی نہیں بُرائی مجھے
ماجد صدیقی

زخمِ ہُنر کو حوصلہ لب کشائی دے

پروین شاکر ۔ غزل نمبر 98
یارب! مرے سکوت کو نغمہ سرائی دے
زخمِ ہُنر کو حوصلہ لب کشائی دے
لہجے کو جُوئے آب کی وہ نے نوائی دے
دُنیا کو حرف حرف کا بہنا سنائی دے
رگ رگ میں اُس کا لمس اُترتا دکھائی دے
جو کیفیت بھی جسم کو دے ،انتہائی دے
شہرِ سخن سے رُوح کو وہ آشنائی دے
آنکھیں بھی بند رکھوں تو رستہ سجھائی دے
تخیئلِ ماہتاب ہو، اظہارِ آئینہ
آنکھوں کو لفظ لفظ کا چہرہ دکھائی دے
دل کو لہو کروں تو کوئی نقش بن سکے
تو مجھ کو کربِ ذات کی سچی کمائی دے
دُکھ کے سفر میں منزلِ نایافت کُچھ نہ ہو
زخمِ جگر سے زخمِ ہُنر تک رسائی دے
میں عشق کائنات میں زنجیر ہوسکوں
مجھ کو حصارِ ذات کے شہر سے رہائی دے
پہروں کی تشنگی پہ بھی ثابت قدم رہوں
دشتِ بلا میں ، رُوح مجھے کربلائی دے
پروین شاکر