ٹیگ کے محفوظات: سب کچھ ریت۔۔۔

سب کچھ ریت۔۔۔

سب کچھ ریت ۔۔۔ سرکتی ریت۔۔۔

ریت کہ جس کی ابھی ابھی قائم اور ابھی ابھی مسمار تہیں۔۔۔ تقدیروں کے

پلٹاوے ہیں

جل تھل۔۔۔ اتھل پتھل سب۔۔۔ جیسے ریت کی سطحوں پر کچھ مٹتی سلوٹیں

کیسی ہے یہ بھوری اور بھسمنت اور بھربھری ریت

جس کے ذرا ذرا سے ہر ذرّے میں پہاڑوں کا دل ہے

ابھی ابھی ان ذرّوں میں اک دھڑکن تڑپی تھی

ابھی ابھی اک سلطنت ڈوبی ہے

ابھی ابھی ریتوں کی سلوٹوں کا اک کنگرہ ٹوٹا ہے

سب کچھ ریت۔۔۔ سرکتی ریت۔۔۔

مجید امجد