ٹیگ کے محفوظات: سائیگاں

یہ نامراد ہنوز آسماں کہاں جائے

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 247
زمیں سے اُٹھ کے مری خاک جاں کہاں جائے
یہ نامراد ہنوز آسماں کہاں جائے
ہوائے درد کا رُخ ہے مرے ہی گھر کی طرف
صدائے گریۂ ہم سائیگاں کہاں جائے
غبار تیرہ شبی بھر گیا ہے آنکھوں میں
یہیں چراغ جلے تھے دھواں کہاں جائے
طلب کوئی نہیں کرتا محبتوں کا صلہ
مگر حساب دل دوستاں کہاں جائے
اگر میں فرض نہ کر لوں کہ سن رہا ہے کوئی
تو پھر مرا سخنِ رائیگاں کہاں جائے
عرفان صدیقی