ٹیگ کے محفوظات: زندگی، جوانی، عشق، حسن

زندگی، جوانی، عشق، حسن

م___

مری ندیم کھلی ہے مری نگاہ کہاں

ہے کس طرف کو مری زیست کا سفینہ رواں

وطن کے بحر سے دور، اُس کے ساحلوں سے دور؟

ہے میری چار طرف بحرِ شعلہ گوں کیسا؟

ہے میرے سینے میں ایک ورطہ ءِ جنوں کیسا؟

مری ندیم کہاں ایسا شعلہ زار میں ہم

جہاں دماغ میں چھپتی ہوئی ضیائیں ہیں

مہیب نور میں لپٹی ہوئی فضائیں ہیں!

کہاں ہے آہ، مرا عہدِ رفتہ، میرا دیار

مرا سفینہ کنارے سے چل پڑا کیسے؟

یہ ہر طرف سے برستے ہیں ہم پہ کیسے شرار

ہماری راہ میں یہ آتشیں خلا کیسے؟

وہ سامنے کی زمیں ہے مگر جزیرہ ءِ عشق

جو دور سے نظر آتی ہے جگمگاتی ہوئی

کہ سر زمینِ عجم کے کہیں قریب ہیں ہم

ترے وطن کے نواحی میں اے حبیب ہیں ہم؟

یہ کیا طلسم ہے، کیا راز ہے، کہاں ہیں ہم؟

کہ ایک خواب میں بے مدعا رواں ہیں ہم؟

ع____

یہ ایک خواب ہے، بے مدعا رواں ہیں ہم

یہ ایک فسانہ ہے کردارِ داستاں ہیں ہم

ابھی یہاں سے بہت دور جہانِ عجم

تصورات میں جس خلد کے جواں ہیں ہم

وہ سامنے کی زمیں ہے مگر جزیرہ ءِ عشق

جو دور سے نظر آتی ہے جگمگاتی ہوئی

فضا پہ جس کی درخشاں ہے اک ستارہ ءِ نور

شعاعیں رقص میں ہیں زمزمے بہاتی ہوئی‘‘

م____

اگر یہاں سے بہت دور ہے جہانِ عجم

مری ندیم چل اس سرزمیں کی جانب چل

ع____

اُسی کی سمت رواں ہیں، سفینہ راں ہیں ہم

یہیں پہنچ کے ملے گی مگر نجات کہیں

ہمیں زمان ومکاں کے حدودِ سنگیں سے

نہ خیروشر ہے نہ یزداں واہرمن ہیں یہاں

کہ جاچکے ہیں وہ اس سرزمینِ رنگیں سے‘‘

م____

مری ندیم چل اس سرزمیں کی جانب چل!

ع____

اُسی کی سمت رواں ہیں، سفینہ راں ہیں ہم

یہاں عدم ہے نہ فکرِ وجود ہے گویا

یہاں حیات مجسم سرود ہے گویا

ن م راشد