ٹیگ کے محفوظات: رُوبرو

کون لمحوں کے رُوبرو ٹھہرے

جون ایلیا ۔ غزل نمبر 177
میں نہ ٹھیروں نہ جان تُو ٹھہرے
کون لمحوں کے رُوبرو ٹھہرے
نہ گزرنے پہ زندگی گزری
نہ ٹھہرنے پہ چار سُو ٹھہرے
ہے مری بزمِ بے دلی بھی عجیب
دلِ پُر خوں جہاں سبو ٹھہرے
میں یہاں مدتوں میں آیا ہوں
ایک ہنگامہ کُو بہ کُو ٹھہرے
محفلِ رخصتِ ہمیشہ ہے
آؤ اک حشر ہا و ہو ٹھہرے
اک توجہ عجب ہے سمتوں میں
کہ نہ بولوں تو گفتگو ٹھہرے
کج ادا تھی بہت اُمید مگر
ہم بھی جون ایک حیلہ جو ٹھہرے
ایک چاکِ برہنگی ہے وجود
پیرہن ہو تو بے رفو ٹھہرے
میں جو ہوں۔۔کیا نہیں ہوں میں خود بھی
خود سے بات آج دُوبدو ٹھہرے
باغِ جاں سے مِلا نہ کوئی ثمر
جون ہم تو نمو نمو ٹھہرے
جون ایلیا

بجھے چراغ تو ٹھہرے ستارہ جوُ ہم لوگ

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 128
اسی کمال کی کرتے تھے آرزو ہم لوگ
بجھے چراغ تو ٹھہرے ستارہ جوُ ہم لوگ
تو شانِ شعلہ گراں‘ میں نشانِ سوختگان
ہیں اپنے اپنے قبیلے کی آبرو ہم لوگ
ابھی سے راستہ کیوں روکنے لگی دُنیا
کھڑے ہوئے ہیں ابھی اپنے رُوبرو ہم لوگ
دریدہ پیرہنِ جاں ہے دیکھیے کیا ہو
نفس کے تار سے کرتے تو ہیں رفوُ ہم لوگ
جنوں کے فیض سے چرچا بتوں میں وحشت کا
خدا کے فضل سے موضوعِ گفتگو ہم لوگ
عرفان صدیقی