ٹیگ کے محفوظات: روے

چڑھ جائے مغز میں نہ کہیں گرد بوے گل

دیوان ششم غزل 1835
زنہار گلستاں میں نہ کر منھ کو سوے گل
چڑھ جائے مغز میں نہ کہیں گرد بوے گل
موسم گئے نشاں بھی کہیں پتے کا نہ تھا
کی شوق کشتگاں نے عبث جستجوے گل
تڑپے خزاں میں اتنے کہ مرمر گئے طیور
جاوے گی ساتھ جی کے مگر آرزوے گل
آئے نظر بہار میں پائیز میں گئے
ہے بے وفائی کرنے کی ہر سال خوے گل
مدت ہوئی کہ دیکھا تھا سیر چمن میں میر
پھرتا ہے اب تلک مری آنکھوں میں روے گل
میر تقی میر