ٹیگ کے محفوظات: روشنیوں کے دشمن

روشنیوں کے دشمن

روشنیوں کے دشمن ادھر آرہے ہیں

ڈھانپ دو قمقمے

لالٹینوں پہ مل دو سیاہی کا زہر

روشنیوں پہ مَنڈھ دو اندھیرے کے بوجھل غلاف

کھڑکیوں سے نہ نکلے اُجالے کی مدّھم سی لہر

رَوزنوں سے بھی جھانکے نہ کوئی سجیلی کرن

آرہے ہیں ادھر روشنیوں کے دشمن

روشنیوں کے دشمن

اُجالوں کے قاتل‘

شکیب جلالی