ٹیگ کے محفوظات: رقص کی رات

رقص کی رات

رقص کی رات کسی غمزہ ءِ عریاں کی کرن

اس لیے بن نہ سکی راہِ تمنا کی دلیل

کہ ابھی دور کسی دیس میں اک ننھا چراغ

جس سے تنویر مرے سینہ ءِ غمناک میں ہے

ٹمٹماتا ہے اس اندیشے میں شاید کہ سحر ہو جائے

اور کوئی لوٹ کے آ ہی نہ سکے!

رقص کی رات کوئی دَورِ طرب

بن نہ سکتا تھا ستاروں کی خدائی گردش؟

محورِ حال بھی ہو، جادہ ءِ آئندہ بھی

اور دونوں میں وہ پیوستگیِ شوق بھی ہو

جو کبھی ساحل و دریا میں نہ تھی،

پھر بھی حائل رہے یوں بُعدِ عظیم

لب ہلیں اور سخن آغاز نہ ہو

ہاتھ بڑھ جائیں مگر لامسہ بے جان رہے؟

تجھے معلوم نہیں،

اب بھی ہر صبح دریچے میں سے یوں جھانکتا ہوں

جیسے ٹوٹے ہوئے تختے سے کوئی تِیرہ نصیب

سخت طوفان میں حسرت سے افق کو دیکھے:

____کاش ابھر آئے کہیں سے وہ سفینہ جو مجھے

اس غمِ مرگِ تہِ آب سے آزاد کرے____

رقص کی شب کی ملاقات سے اتنا تو ہوا

دامنِ زیست سے میں آج بھی وابستہ ہوں،

لیکن اس تختہ ءِ نازک سے یہ امید کہاں

کہ یہ چشم و لبِ ساحل کو کبھی چوم سکے!

ن م راشد