ٹیگ کے محفوظات: راہزن

یہ کب کے لے رہا ہے ہم سے اے چرخِ کہن بدلے

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 121
نہ روکی برق تو نے آشیاں بدلے چمن بدلے
یہ کب کے لے رہا ہے ہم سے اے چرخِ کہن بدلے
محبت ہو تو جوئے شِیر کو اِک ضرب کافی ہے
کوئی پوچھے کہ تو نے کتنے تیشے کوہکن بدلے
سہولت اس سے بڑھ کر کارواں کو اور کیا ہو گی
نئی راہیں نکل آئیں پرانے راہزن بدلے
ہوا آخر نہ ہمر کوئی ان کے روئے روشن کا
تراشے گل بھی شمعوں کے چراغِ انجمن بدلے
لباس نَو عدم والوں کو یوں احباب دیتے ہیں
کہ اب ان کے قیامت تک نہ جائیں گے کفن بدلے
قمر مابینِ عرش و فرش لاکھو انقلاب آئے
مگر اپنا خدا بدلا نہ اپنے پنجتنؑ بدلے
قمر جلالوی

سب پھول ہی نہیں کانٹے بھی تھے چمن میں

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 69
صبر آگیا یہ کہہ کر دل سے غمِ وطن میں
سب پھول ہی نہیں کانٹے بھی تھے چمن میں
بلبل ہے گلستاں میں پروانہ انجمن میں
سب اپنے اپنے گھر ہیں اک ہم نہیں وطن میں
صیاد باغباں کی ہم سے کبھی نہ کھٹکی
جیسے رہے قفس میں ویسے رہے چمن میں
دامانِ آسماں کو تاروں سے کیا تعلق
ٹانکے لگے ہوئے ہیں بوسیدہ پیرہن میں
سنتے ہیں اب وہاں بھی چھائی ہوئی ہے ظلمت
ہم تو چراغ جلتے چھوڑ آئے تھے وطن میں
کچھ اتنے مختلف ہیں احباب جب اور اب کے
ہوتا ہے فرق جتنا رہبر میں راہزن میں
صیاد آج کل میں شاید قفس بدل دے
خوشبو بتا رہی ہے پھول آ گئے چمن میں
اے باغباں تجھے بھی اتنی خبر تو ہو گی
جب ہم چمن میں آئے کچھ بھی نہ تھا چمن میں
سونی پڑی ہے محفل، محفل میں جا کے بیٹھو
آتے نہیں پتنگے بے شمع انجمن میں
دیدار آخری پر روئے قمر وہ کیا کیا
یاد آئیں گی وفائیں منہ دیکھ کر کفن میں
قمر جلالوی