ٹیگ کے محفوظات: دوراں

دیوانوں کی تکراروں سے، خاموشیِ بیاباں ٹوٹ گئی

وحشت کے ان معماروں سے، بنیادِ ایواں ٹوٹ گئی
دیوانوں کی تکراروں سے، خاموشیِ بیاباں ٹوٹ گئی
اے عزمِ جواں شورش کیسی، اب تک تو یہ سنتے آئے ہیں
دو نازک سی پتواروں سے، ہر جرأتِ طوفاں ٹوٹ گئی
تخیئل کی دَرپردہ ضربیں، وحشی کا سہارا بن ہی گئیں
زنجیروں کی جھنکاروں سے، پابندیِ زنداں ٹوٹ گئی
زنداں کی اندھیری راتوں میں، جینے کا سہارا ختم ہُوا
افسوس کہ ان بے چاروں سے، تصویرِ گلستاں ٹوٹ گئی
دیوانوں نے آخر گلشن، رو رو کے بیاباں کر ڈالا
آنکھوں کے لرزتے پاروں سے، دیوارِ گلستاں ٹوٹ گئی
قسمت کی کرشمہ سازی تھی یا لُطف و کرم ملّاحوں کا
ٹکرا کر خشک کناروں سے پروردہِ طوفاں ٹوٹ گئی
دکھ درد کے ماروں کا ہر غم، ساغر کی کھنک میں ڈوب گیا
پیمانوں کی جھنکاروں سے فکرِ غمِ دوراں ٹوٹ گئی
بارِ غمِ اُلفت اُٹھ نہ سکا، کم ظرفوں کی نبضیں چھوٹ گئیں
افسوس ہے ان بیماروں سے، توقیرِ غمِ جاں ٹوٹ گئی
ہستیِ شکیبؔ زار کو، رنج و غم کے ہی چرکے کافی تھے
ان نازک سی دیواروں سے تعمیرِ دل و جاں ٹوٹ گئی
شکیب جلالی

یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں

تُو کہ ہم سے ہے بصد ناز گریزاں جاناں
یاد کیا تجھ کو دلائیں ترا پیماں جاناں
چل یہ مانا کہ تجھے یاد نہیں کچھ بھی۔ مگر
یہ چمکتا ہوا کیا ہے سرِ مژگاں جاناں
آج قدموں تلے روندی ہے کلاہِ پندار
آج وا مجھ پہ ہوا ہے درِ امکاں جاناں
میں بھی کیا چیز ہوں آخر، جو یہاں میرے لے
ہیں فنا اور بقا دست و گریباں جاناں
خواب، تنہائی، تری یاد، مرا ذوقِ سخن
عمر بھر کے لیے کافی ہے یہ ساماں جاناں
زندگی ٹھہری ہوئی، اور گزرتی ہوئی عمر
دیکھ کیا کچھ ہے یہاں ساکت و جنباں جاناں
جتنی زنجیر ہے، اُتنی ہی مری حدِّ سفر
ہے مری حدِّ نظر وسعتِ زنداں جاناں
ابھی حالات موافق ہیں تو کچھ طے کرلیں
کتنا ٹھہرے گی بھلا گردشِ دوراں جاناں
اک ترے غم کی کمی تھی تری دیوانے کو
ورنہ وحشت تو یہاں تھی ہی فراواں جاناں
درد تازہ بھی ہے، گہرا بھی ہے، جاں سوز بھی ہے
کوئی مرہم، کوئی نشتر، کوئی درماں جاناں
اپنا تو ایک ہی لہجہ ہے یہ، سیدھا، سچا
بزمِ احباب ہو، یا بزمِ حریفاں جاناں
اور ہوں گے جو ترے عشق کی تشہیر کریں
ہم نہیں وہ، جو کریں چاک گریباں جاناں
پوچھتا رہتا ہوں اکثر، کہ ہُوا کیا ہے تجھے؟
کچھ بتاتا ہی نہیں ہے دلِ ناداں جاناں
جُز دعا نذرگزارے گا تجھے کیا یہ فقیر؟
جا تری خیر، خدا تیرا نگہباں جاناں
’’خلقتِ شہر تو کہنے کو فسانے مانگے‘‘
ہم بہت خوش ہیں ترے بعد، ارے ہاں جاناں
ہم جہاں جائیں یونہی خاک اڑاتے جائیں
پاوٗں کے ساتھ بندھا ہے یہ بیاباں جاناں
یاد آتا تو بہت ہو گا تجھے جانِ فراز
کس قدر پیار سے کہتا تھا وہ جاناں، جاناں
ہائے کیا وقت تھا، اس بام پہ ہوتے تھے فراز
اب جہاں ہوتا ہے عرفان غزل خواں، جاناں
عرفان ستار

تیرا یہ رنگ اے شبِ ہجراں نہ تھا کبھی

محرومِ خواب دیدۂ حیراں نہ تھا کبھی
تیرا یہ رنگ اے شبِ ہجراں نہ تھا کبھی
تھا لطفِ وصل اور کبھی افسونِ انتظار
یوں دردِ ہجر سلسلہ جنباں نہ تھا کبھی
پرساں نہ تھا کوئی تو یہ رسوائیاں نہ تھیں
ظاہر کسی پہ حالِ پریشاں نہ تھا کبھی
ہر چند غم بھی تھا مگر احساسِ غم نہ تھا
درماں نہ تھا تو ماتمِ درماں نہ تھا کبھی
دن بھی اُداس اور مری رات بھی اُداس
ایسا تو وقت اے غمِ دوراں نہ تھا کبھی
دورِ خزاں میں یوں مرے دل کو قرار ہے
میں جیسے آشنائے بہاراں نہ تھا کبھی
کیا دن تھے جب نظر میں خزاں بھی بہار تھی
یوں اپنا گھر بہار میں ویراں نہ تھا کبھی
بے کیف و بے نشاط نہ تھی اس قدر حیات
جینا اگرچہ عشق میں آساں نہ تھا کبھی
ناصر کاظمی

کافر لگے ہوئے ہیں مسلماں کے ساتھ ساتھ

قمر جلالوی ۔ غزل نمبر 84
گیسو ہیں ان کے عارضِ تاباں کے ساتھ ساتھ
کافر لگے ہوئے ہیں مسلماں کے ساتھ ساتھ
سامان خاک آیا تھا انساں کے ساتھ ساتھ
صرف ایک روح تھی تنِ عریاں کے ساتھ ساتھ
اے ناخدا وہ حکمِ خدا تھا جو بچ گئی
کشتی کو اب تو چھوڑ دے دے طوفاں کے ساتھ ساتھ
اے باغباں گلوں پہ ہی بجلی نہیں گری
ہم بھی لٹے ہیں تیرے گلستاں کے ساتھ ساتھ
جب لطف ہو جنوں تو کہیں زنداں سے لے اڑے
وہ ڈھونڈتے پھریں مجھے درباں کے ساتھ ساتھ
دو چار ٹانکے اور لگے ہاتھ بخیر گر
دامن بھی کچھ پھٹا ہے گریباں کے ساتھ ساتھ
تم میرا خوں چھپا تو رہے ہو خبر بھی ہے
دو دو فرشتے رہتے ہیں انساں کے ساتھ ساتھ
اہلِ قفس کا اور تو کچھ بس نہ چل سکا
آہیں بھریں نسیمِ گلستاں کے ساتھ ساتھ
دیوانے شاد ہیں کہ وہ آئے ہیں دیکھنے
تقدیر کھل گئے درِ زنداں کے ساتھ ساتھ
واعظ مٹے گا تجھ سے غمِ روزگار کیا
ساغر چلے گا گردشِ دوراں کے ساتھ ساتھ
اک شمع کیا کوئی شبِ فرقت نہیں قمر
تارے بھی چھپ گئے ہیں مہِ تاباں کے ساتھ ساتھ
قمر جلالوی

جب تلک ساتھ ترے عمرِ گریزاں چلیے

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 22
غم بہ دل، شکر بہ لب، مست و غزل خواں چلیے
جب تلک ساتھ ترے عمرِ گریزاں چلیے
رحمتِ حق سے جو اس سَمت کبھی راہ ملے
سوئے جنّت بھی براہِ رہِ جاناں چلیے
نذر مانگے جو گلستاں سے خداوندِ جہاں
ساغرِ مے میں لیے خونِ بہاراں چلیے
جب ستانے لگے بے رنگیِ دیوارِ جہاں
نقش کرنے کوئی تصویرِ حسیناں چلیے
کچھ بھی ہو آئینۂ دل کو مصفّا رکھیے
جو بھی گزرے، مثلِ خسروِ دوراں چلیے
امتحاں جب بھی ہو منظور جگر داروں کا
محفلِ یار میں ہمراہِ رقیباں چلیے
فیض احمد فیض