ٹیگ کے محفوظات: دنیادار

بال چاندی ہو گئے سونا ہوے رخسار بھی

رنگ دکھلاتی ہے کیا کیا عمر کی رفتار بھی
بال چاندی ہو گئے سونا ہوے رخسار بھی
درد کے جھونکوں نے اب کے دل ہی ٹھنڈا کر دیا
آگ برساتا تھا آگے دیدۂ خونبار بھی
بیٹھے بیٹھے جانے کیوں بیتاب ہو جاتا ہے دل
پوچھتے کیا ہو میاں اچھا بھی ہوں بیمار بھی
شوقِ آزادی لیے جاتا ہے عالم سے پرے
روکتی ہے ہر قدم آوازِ پائے یار بھی
سادگی سے تم نہ سمجھے ترکِ دنیا کا سبب
ورنہ وہ درویش تھے پردے میں دنیادار بھی
کس طرح گزرے گا ناصر فرصتِ ہستی کا دن
جم گیا دیوار بن کر سایۂ دیوار بھی
ناصر کاظمی

فوج کا سالار پاؤں پڑ گیا

مرکزی کردار پاؤں پڑ گیا
فوج کا سالار پاؤں پڑ گیا
میں اُسے حیراں کھڑا تکتا رہا
جب وہ دُنیادار پاؤں پڑ گیا
میں غلط تھا اِس لیے پاؤں پڑا
اور وہ بےکار پاؤں پڑ گیا!
جب ٹھکانے لگ گئی عقلِ سلیم
لشکرِ اغیار پاؤں پڑ گیا
ایک نٙو سرباز موقع ملتے ہی
کھینچ کر تلوار ، پاؤں پڑ گیا!
یار! یہ ممکن نہیں سچ سچ بتا
واقعی!! سردار پاؤں پڑ گیا؟؟؟
کل مجھے خاطر میں جو لاتا نہ تھا
وہ بھی آخرکار پاؤں پڑ گیا
افتخار فلک