ٹیگ کے محفوظات: خیز

کہ نہ زاہد کریں جہاں پرہیز

مصطفٰی خان شیفتہ ۔ غزل نمبر 1
ہند کی وہ زمیں ہے عشرت خیز
کہ نہ زاہد کریں جہاں پرہیز
وجد کرتے ہیں پی کے مے صوفی
مست سوتے ہیں صبح تک شب خیز
رند کیا یاں تو شاہد و مے سے
پارسا کو نہیں گزیر و گریز
سخت مشکل ہے ایسی عشرت میں
خطرِ حشر و بیمِ رستا خیز
ہے غریبوں کو جراتِ فرہاد
ہے فقیروں کو عشرتِ پرویز
عیش نے یاں بٹھا دیا ناقہ
غم نے کی یاں سے رخش کو مہمیز
کوئی یاں غم کو جانتا بھی نہیں
جز غمِ عشق سو ہے عیش آمیز
بادِ صر صر یہاں نسیمِ چمن
نارِ عنصر سے آتشِ گل تیز
بوستاں کی طرح یہاں صحرا
دل کشا، دل پذیر، دل آویز
کوئی پامالِ جورِ چرخ نہیں
کتنی ہے یہ زمین راحت خیز
اثرِ زہرہ اس میں یاں پایا
وہ جو مریخ ہے بڑا خوں ریز
شیفتہ تھام لو عنانِ قلم
یہ زمیں گرچہ ہے ہوس انگیز
مصطفٰی خان شیفتہ

عمر بھر ہم خوابِ شب انگیز کے پیچھے رہے

منصور آفاق ۔ غزل نمبر 644
گوش بر آواز، کم آمیز کے پیچھے رہے
عمر بھر ہم خوابِ شب انگیز کے پیچھے رہے
ہاتھ چھونے کا کہاں موقع فراہم ہوسکا
اک طرف وہ اک طرف ہم میز کے پیچھے رہے
اونٹنی چلتی رہی تاروں سے رستہ پوچھ کر
رات بھر ہم صبح دل آویز کے پیچھے رہے
وہ سمندر سے لپٹ جاتی رہی ہر ایک بار
بس یونہی ہم موجِ تند و تیز کے پیچھے رہے
روح کی شب زندہ داری کی بہشتیں چھوڑ کر
جسم کی ہم وحشتِ شب خیز کے پیچھے رہے
چشمۂ دل سے نکل کر آنسوئوں کے ساتھ ہم
آنکھ کو آتی ہوئی کاریز کے پیچھے رہے
دوصدی پہلے مجھے کھینچا گیا تھا باندھ کر
پھر ہمیشہ یہ قدم انگریز کے پیچھے رہے
مسئلہ کشمیرکا منصور یہ ہے ، سب قزاق
زعفراں کی وادی ء زرخیر کے پیچھے رہے
منصور آفاق