ٹیگ کے محفوظات: تیاریاں

تجھ کو تڑپانے کی ہیں تیاریاں

جون ایلیا ۔ غزل نمبر 4
تجھ بدن پر ہم نے جانیں واریاں
تجھ کو تڑپانے کی ہیں تیاریاں
کر رہے ہیں یاد اسے ہم روزوشب
ہیں بُھلانے کی اسے تیاریاں
تھا کبھی میں اک ہنسی اُن کے لیے
رو رہی ہیں اب مجھے مت ماریاں
جھوٹ سچ کے کھیل میں ہلکان ہیں
خوب ہیں یہ لڑکیاں بےچاریاں
شعر تو کیا بات کہہ سکتے نہیں
جو بھی نوکر جون ہیں سرکاریاں
جو میاں جاتے ہیں دفتر وقت پر
اُن سے ہیں اپنی جُدا دشواریاں
ہم بھلا آئین اور قانون کی
کب تلک سہتے رہیں غداریاں
سُن رکھو اے شہر دارو ! خون کی
ہونے ہی والی ہیں ندیاں جاریاں
جون ایلیا

خدا والا ہوں لیکن دہریوں سے یاریاں بھی ہیں

آفتاب اقبال شمیم ۔ غزل نمبر 106
تضادوں کے سمجھنے میں مجھے دشواریاں بھی ہیں
خدا والا ہوں لیکن دہریوں سے یاریاں بھی ہیں
کہیں سوتے نہ رہ جائیں زنِ خواہش کے پہلو میں
ہمیں درپیش کل کے کوچ کی تیاریاں بھی ہیں
بجا ہے اور بڑھ جاتی ہے زیر پائے لنگ آ کر
مگر اس راہ صد جادہ میں ناہمواریاں بھی ہیں
یہ خالی پن کہاں پیمانۂ مقدار میں آئے
مزے کے انت میں بے انت کی بیزاریاں بھی ہیں
میں سوتے جاگتے کی داستاں دہراتا رہتا ہوں
مری بیداریوں میں خواب کی سرشاریاں بھی ہیں
آفتاب اقبال شمیم