ٹیگ کے محفوظات: تصرف

آرے سے اگر چیرے تو میں اف نہیں کرتا

مصطفٰی خان شیفتہ ۔ غزل نمبر 4
دیکھوں تو کہاں تک وہ تلطف نہیں کرتا
آرے سے اگر چیرے تو میں اف نہیں کرتا
تم دیتے ہو تکلیف، مجھے ہوتی ہے راحت
سچ جانئے میں اس میں تکلف نہیں کرتا
سب باتیں انہیں کی ہیں یہ؟ سچ بولیو قاصد!
کچھ اپنی طرف سے تو تصرف نہیں کرتا؟
سو خوف کی ہو جائے، مگر رندِ نظر باز
دل جلوہ گہِ لانشف و شف نہیں کرتا
شوخی سے کسی طرح سے چین اس کو نہیں ہے
آتا ہے مگر آ کے توقف نہیں کرتا
اس شوخِ ستم گر سے پڑا ہے مجھے پالا
جو قتل کئے پر بھی تاسف نہیں کرتا
جو کچھ ہے انا میں وہ ٹپکتا ہے انا سے
کچھ آپ سے میں ذکرِ تصوف نہیں کرتا
تسکین ہو کیا وعدے سے، معشوق ہے آخر
ہر چند سنا ہے کہ تخلف نہیں کرتا
کیا حال تمہارا ہے ہمیں بھی تو بتاؤ
بے وجہ کوئی شیفتہ اُف اُف نہیں کرتا
مصطفٰی خان شیفتہ

ہم نہ سمجھے بڑا تاسف ہے

دیوان سوم غزل 1295
دل عجب نسخۂ تصوف ہے
ہم نہ سمجھے بڑا تاسف ہے
آپ ہی صرف عشق ہوجانا
یہ بھی درویش کا تصرف ہے
منھ ادھر کر کے وہ نہیں سوتا
خواب میں آوے تو تلطف ہے
یاں تو تکلیف سی کھنچی تکلیف
واں وہی اب تلک تکلف ہے
چھیڑ اس شوخ نے رکھی ہم سے
عہد پر عہد ہے تخلف ہے
مرگ کیا منزل مراد ہے میر
یہ بھی اک راہ کا توقف ہے
میر تقی میر

کبھو مزاج میں اس کے ہمیں تصرف تھا

دیوان سوم غزل 1080
وفا تھی مہر تھی اخلاص تھا تلطف تھا
کبھو مزاج میں اس کے ہمیں تصرف تھا
جو خوب دیکھو تو ساری وہی حقیقت ہے
چھپانا چہرے کا عشاق سے تکلف تھا
اسیر عشق نہیں بازخواہ خوں رکھتے
ہمارے قتل میں اس کو عبث توقف تھا
نہ پوچھو خوب ہے بدعہدیوں کی مشق اس کو
ہزاروں عہد کیے پر وہی تخلف تھا
جہاں میں میر سے کاہے کو ہوتے ہیں پیدا
سنا یہ واقعہ جن نے اسے تاسف تھا
میر تقی میر