ٹیگ کے محفوظات: تانی

کہاں ہم کہاں تم کہاں پھر جوانی

دیوان پنجم غزل 1738
ملو ان دنوں ہم سے اک رات جانی
کہاں ہم کہاں تم کہاں پھر جوانی
شکایت کروں ہوں تو سونے لگے ہے
مری سرگذشت اب ہوئی ہے کہانی
ادا کھینچ سکتا ہے بہزاد اس کی
کھنچے صورت ایسی تو یہ ہم نے مانی
ملاقات ہوتی ہے تو کشمکش سے
یہی ہم سے ہے جب نہ تب اینچا تانی
بسنتی قبا پر تری مر گیا ہے
کفن میر کو دیجیو زعفرانی
میر تقی میر