ٹیگ کے محفوظات: بہنے

کچھ شرارے بھی رگِ جاں کو جُھلسنے والے

اَبر بن کر مری آنکھوں سے برسنے والے
کچھ شرارے بھی رگِ جاں کو جُھلسنے والے
مُلتفت پا کے تجھے ، ہوش گنوا بیٹھیں گے
یہ تری نیم نِگاہی کو ترسنے والے
کوئی پیکر ہو جھلکتے ہیں انہی کے خدو خال
بن گئے جزوِ نظر ، دھیان میں بسنے والے
دوست داری کا تقاضا ہے کہ میں کچھ نہ کہوں
آستینوں کے مکیں ہیں ، مجھے ڈسنے والے
مُفتیِ شہر کی تقریر سے ڈرنا کیا ہے
کہیں ایسے بھی گرجتے ہیں برسنے والے
طاق مژگان پہ لرزتے رہے اشکوں کے چراغ
کس تکلیف سے بہیے ٗ آج یہ بہنے والے
شکیب جلالی

تری خواہش نہیں دل میں زیادہ دیر رہنے کی

کہے دیتا ہوں، گو ہے تو نہیں یہ بات کہنے کی
تری خواہش نہیں دل میں زیادہ دیر رہنے کی
بچا کر دل گزرتا جا رہا ہوں ہر تعلق سے
کہاں اس آبلے کو تاب ہے اب چوٹ سہنے کی
رگ و پے میں نہ ہنگامہ کرے تو کیا کرے آخر
اجازت جب نہیں اس رنج کو آنکھوں سے بہنے کی
بس اپنی اپنی ترجیحات، اپنی اپنی خواہش ہے
تجھے شہرت کمانے کی، مجھے اک شعر کہنے کی
جہاں کا ہوں، وہیں کی راس آئے گی فضا مجھ کو
یہ دنیا بھی بھلا کوئی جگہ ہے میرے رہنے کی؟
جو کل عرفان پر گزری سنا کچھ اُس کے بارے میں؟
خبر تم نے سُنی طوفان میں دریا کے بہنے کی؟
عرفان ستار

تری خواہش نہیں دل میں زیادہ دیر رہنے کی

عرفان ستار ۔ غزل نمبر 59
کہے دیتا ہوں، گو ہے تو نہیں یہ بات کہنے کی
تری خواہش نہیں دل میں زیادہ دیر رہنے کی
بچا کر دل گزرتا جا رہا ہوں ہر تعلق سے
کہاں اس آبلے کو تاب ہے اب چوٹ سہنے کی
رگ و پے میں نہ ہنگامہ کرے تو کیا کرے آخر
اجازت جب نہیں اس رنج کو آنکھوں سے بہنے کی
بس اپنی اپنی ترجیحات، اپنی اپنی خواہش ہے
تجھے شہرت کمانے کی، مجھے اک شعر کہنے کی
جہاں کا ہوں، وہیں کی راس آئے گی فضا مجھ کو
یہ دنیا بھی بھلا کوئی جگہ ہے میرے رہنے کی؟
جو کل عرفان پر گزری سنا کچھ اُس کے بارے میں؟
خبر تم نے سُنی طوفان میں دریا کے بہنے کی؟
عرفان ستار