ٹیگ کے محفوظات: بہاراں

کہ ہر نفس، نفسِ آخرِ بہاراں ہے

جون ایلیا ۔ غزل نمبر 205
غبارِ محمل گل پر ہجوم یاراں ہے
کہ ہر نفس، نفسِ آخرِ بہاراں ہے
بتاؤ وجد کروں یا لبِ سخن کھولوں
ہوں مستِ راز اور انبوہ رازداراں ہے
مٹا ہوا ہوں شباہت پہ نامداروں کی
چلا ہوں کہ یہی وضعِ نامداراں ہے
چلا ہوں پھر سرِ کوئے دراز مژگاں
مرا ہنر زخم تازہ داراں ہے
یہی وقت کہ آغوش دار رقص کروں
سرورِ نیم شبی ہے صفِ نگاراں ہے
ہوا ہے وقت کہیں سے علیم کو لاؤ
ہے ایک شخص جو کمبخت یارِ یاراں ہے
فراق یار کو ٹھیرا لیا ہے عذرِ ہوس
کوئی بتاؤ یہی رسمِ سوگواراں ہے
جون ایلیا

نہ ہوا کہ صبح ہووے شب تیرہ روزگاراں

دیوان اول غزل 290
نہ گیا خیال زلف سیہ جفاشعاراں
نہ ہوا کہ صبح ہووے شب تیرہ روزگاراں
نہ کہا تھا اے رفوگر ترے ٹانکے ہوں گے ڈھیلے
نہ سیا گیا یہ آخر دل چاک بے قراراں
ہوئی عید سب نے پہنے طرب و خوشی کے جامے
نہ ہوا کہ ہم بھی بدلیں یہ لباس سوگواراں
خطر عظیم میں ہیں مری آہ و اشک سے سب
کہ جہان رہ چکا پھر جو یہی ہے باد و باراں
کہیں خاک کو کو اس کی تو صبا نہ دیجو جنبش
کہ بھرے ہیں اس زمیں میں جگرجگر فگاراں
رکھے تاج زر کو سر پر چمن زمانہ میں گل
نہ شگفتہ ہو تو اتنا کہ خزاں ہے یہ بہاراں
نہیں تجھ کو چشم عبرت یہ نمود میں ہے ورنہ
کہ گئے ہیں خاک میں مل کئی تجھ سے تاجداراں
تو جہاں سے دل اٹھا یاں نہیں رسم دردمندی
کسی نے بھی یوں نہ پوچھا ہوئے خاک یاں ہزاراں
یہ اجل سے جی چھپانا مرا آشکار ہے گا
کہ خراب ہو گا مجھ بن غم عشق گل عذاراں
یہ سنا تھا میر ہم نے کہ فسانہ خواب لا ہے
تری سرگذشت سن کر گئے اور خواب یاراں
میر تقی میر

جب تلک ساتھ ترے عمرِ گریزاں چلیے

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 22
غم بہ دل، شکر بہ لب، مست و غزل خواں چلیے
جب تلک ساتھ ترے عمرِ گریزاں چلیے
رحمتِ حق سے جو اس سَمت کبھی راہ ملے
سوئے جنّت بھی براہِ رہِ جاناں چلیے
نذر مانگے جو گلستاں سے خداوندِ جہاں
ساغرِ مے میں لیے خونِ بہاراں چلیے
جب ستانے لگے بے رنگیِ دیوارِ جہاں
نقش کرنے کوئی تصویرِ حسیناں چلیے
کچھ بھی ہو آئینۂ دل کو مصفّا رکھیے
جو بھی گزرے، مثلِ خسروِ دوراں چلیے
امتحاں جب بھی ہو منظور جگر داروں کا
محفلِ یار میں ہمراہِ رقیباں چلیے
فیض احمد فیض

قاصدا ، قیمتِ گلگشتِ بہاراں کیا ہے

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 25
ان دنوں رسم و رہِ شہرِ نگاراں کیا ہے
قاصدا ، قیمتِ گلگشتِ بہاراں کیا ہے
کُوئے جاناں ہے کہ مقتل ہے کہ میخانہ ہے
آج کل صورتِ بربادیِ یاراں کیا ہے
قطعہ
فیض احمد فیض

جب چاہا کر لیا ہے کنجِ قفس بہاراں

فیض احمد فیض ۔ غزل نمبر 40
یادِ غزال چشماں، ذکرِ سمن عذاراں
جب چاہا کر لیا ہے کنجِ قفس بہاراں
آنکھوں میں درد مندی، ہونٹوں پہ عذر خواہی
جانانہ وارآئی شامِ فراقِ یاراں
ناموسِ جان و دل کی بازی لگی تھی ورنہ
آساں نہ تھی کچھ ایسی راہِ وفا شعاراں
مجرم ہو خواہ کوئی، رہتا ہے ناصحوں کا
روئے سخن ہمیشہ سوئے جگر فگاراں
ہے اب بھی وقت زاہد، ترمیمِ زہد کر لے
سوئے حرم چلا ہے انبوہِ بادہ خواراں
شاید قریب پہنچی صبحِ وصال ہمدم
موجِ صبا لیے ہے خوشبوئے خوش کناراں
ہے اپنی کشتِ ویراں، سرسبز اس یقیں سے
آئیں گے اس طرف بھی اک روز ابرو باراں
آئے گی فیض اک دن بادِ بہار لے کر
تسلیمِ مے فروشاں، پیغامِ مے گساراں
فیض احمد فیض

اے چشمِ اعتبار پریشاں نہ کر مجھے

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 294
جب وہم ہے وہ شکل تو حیراں نہ کر مجھے
اے چشمِ اعتبار پریشاں نہ کر مجھے
اس روشنی میں تیرا بھی پیکر نظر نہ آئے
اچھا یہ بات ہے تو فروزاں نہ کر مجھے
آئینہ سکوت نہ رکھ سب کے روبرو
میں دل پہ نقش ہوں تو نمایاں نہ کر مجھے
یوسف نہیں ہوں مصر کے بازار میں نہ بیچ
میں تیرا انتخاب ہوں ارزاں نہ کر مجھے
کون ایسی بستیوں سے گزرتا ہے روز روز
میرے کرشمہ ساز‘ بیاباں نہ کر مجھے
میں برگ ریزِ ہجر میں زندہ نہ رہ سکوں
اتنا امیدوارِ بہاراں نہ کر مجھے
عرفان صدیقی

خزاں کی رت میں بھی ابرِ بہاراں بھیج دے کوئی

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 211
گہر برسانے والے‘ موجِ باراں بھیج دے کوئی
خزاں کی رت میں بھی ابرِ بہاراں بھیج دے کوئی
پرندے تھک چکے ہیں اڑتے اڑتے آسمانوں میں
انہیں بھی اب نویدِ شاخساراں بھیج دے کوئی
بہت دن سے غبار اٹھا نہیں ویران راہوں پر
خرابوں میں گروہِ شہسواراں بھیج دے کوئی
مری بستی کے سارے رہنے والے سرکشیدہ ہیں
تو پھر کس کو کلاہ شہر یاراں بھیج دے کوئی
جو اوروں کے دکھوں کا بار اٹھائے پھرتے رہتے ہیں
اب ان شانوں کو دستِ غمگساراں بھیج دے کوئی
عرفان صدیقی

چڑھیا دن نئیں ڈھلدا، کیکن رات ڈھلے بِن یاراں

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 52
دیہوں اسمانی ٹھیڈے کھاندا، من وچ روگ ہزاراں
چڑھیا دن نئیں ڈھلدا، کیکن رات ڈھلے بِن یاراں
ترنجناں بن گئے، عمراں دے ویہڑے، اِنج وی ہونا سی
پُونیاں بنیاں، دُکھ ایس دل دے، چرخے پان گھکاراں
اک دل اوہ وی، درد رنجاناں، کس بازی تے لائیے
اساں جیہیاں بندیاں دیاں ایتھے، کیہ جتاں کیہ ہاراں
تیریاں ہوندیاں تے ایہہ گھر دی، حالت کدے نہ ویکھی
یا نظراں نئیں اپنی تھاں تے، یاپیاں کمّن دواراں
کل ائی ایہناں پھُل ورگی، تصویراں نے دَبھ جمسی
کول بہار کے تینوں اج میں، کیہڑے نقش اُتاراں
اکھیاں ول اِنج مڑدے دِسّن، اکھیوں وچھڑے اتھرو
دَکھنوں اُتر پرت پیاں نیں، جنج کونجاں دیاں ڈاراں
سُک گئے بوٹے آساں والے، سجن جدوں دے ٹُر گئے
سچ کہندے نیں لوکی ماجدُ، یاراں نال بہاراں
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)