ٹیگ کے محفوظات: اہم

چند کو چھوڑ کے سب اہلِ قلم جھوٹے ہیں

وصل کا عیش غلط، ہجر کے غم جھوٹے ہیں
چند کو چھوڑ کے سب اہلِ قلم جھوٹے ہیں
اپنا رستہ یہاں خود ڈھونڈنا پڑتا ہے میاں
عشق کی راہ میں سب نقشِ قدم جھوٹے ہیں
گونجتی ہے یہی آواز دمادم ہر سُو
ایھا النّاس سنو، دیر و حرم جھوٹے ہیں
اولاً ہم تھے جنھیں خواب کا آزار ملا
اور تُو پھر بھی سمجھتا ہے کہ ہم جھوٹے ہیں
میری جانب ہیں بہت عام سے سچے، دو چار
اور ترے ساتھ بہت سارے اہم جھوٹے ہیں
کم سے کم کہتے وہی ہیں کہ جو دل مانتا ہے
یعنی ہم جھوٹے اگر ہیں بھی تو کم جھوٹے ہیں
ہے کوئی اور ہی اقلیم جو شاید سچ ہو
یہ مگر طے ہے وجود اور عدم جھوٹے ہیں
تم بھلا کون، کسی حرف کے تقدیر کشا؟
وقت کو فیصلہ کرنے دو کہ ہم جھوٹے ہیں
راہ عرفان محبت کی ہے سیدھی، سچی
اب کھلا ہم پہ کہ اس راہ کے خم جھوٹے ہیں
عرفان ستار

صد رہ آہنگِ زمیں بوسِ قدم ہے ہم کو

دیوانِ غالب ۔ غزل نمبر 142
واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو
صد رہ آہنگِ زمیں بوسِ قدم ہے ہم کو
دل کو میں اور مجھے دل محوِ وفا رکھتا ہے
کس قدر ذوقِ گرفتاریِ ہم ہے ہم کو
ضعف سے نقشِ پئے مور، ہے طوقِ گردن
ترے کوچے سے کہاں طاقتِ رم ہے ہم کو
جان کر کیجے تغافل کہ کچھ امّید بھی ہو
یہ نگاہِ غلط انداز تو سَم ہے ہم کو
رشکِ ہم طرحی و دردِ اثرِ بانگِ حزیں
نالۂ مرغِ سحر تیغِ دو دم ہے ہم کو
سر اڑانے کے جو وعدے کو مکرّر چاہا
ہنس کے بولے کہ ’ترے سر کی قسم ہے ہم کو!‘
دل کے خوں کرنے کی کیا وجہ؟ ولیکن ناچار
پاسِ بے رونقیِ دیدہ اہم ہے ہم کو
تم وہ نازک کہ خموشی کو فغاں کہتے ہو
ہم وہ عاجز کہ تغافل بھی ستم ہے ہم کو
لکھنؤ آنے کا باعث نہیں کھلتا یعنی
ہوسِ سیر و تماشا، سو وہ کم ہے ہم کو
مقطعِ سلسلۂ شوق نہیں ہے یہ شہر
عزمِ سیرِ نجف و طوفِ حرم ہے ہم کو
لیے جاتی ہے کہیں ایک توقّع غالب
جادۂ رہ کششِ کافِ کرم ہے ہم کو
مرزا اسد اللہ خان غالب