ٹیگ کے محفوظات: آخرِشب

آخرِشب

کوئی دستک مسلسل ہے، کہیں ہے مستقل آہٹ

ہوا کا شور ہے شاید

کبھی محسوس ہوتا ہے سنہرے خشک پتوں میں سے گزرا سانپ کا جوڑا

پرندہ کوئی سہما ہے

فضا میں سرسراہٹ ہے

مرے اندر بھٹکتی ہے کوئی آواز یا! شاید

بلاتیں ہیں مجھے اِس دم بچھڑنے والوں کی یادیں

وہ جن پر زندگی اک خوف کی صورت مسلّط تھی

کبھی کے ہار کے اس زندگی سے روٹھ بیٹھے جو!

کبھی لگتا ہے یوں جیسے کسی تاریک بستی میں

چلی آندھی!

قضا آئی

اجل شاید مری کھڑکی تلک ۔۔۔ بستر تلک آئی

ستارے ڈوبنے کو ہیں

اندھیرا بین کرتا ہے

خدارا ۔۔۔ نیند کا غلبہ

دیے کی لو بھڑکتی ہے

بجھاکر آخری لمحہ

نینا عادل