ٹیگ کے محفوظات: اتارے

جان اگر پیاری ہے پیارے مت لکھو

احمد فراز ۔ غزل نمبر 50
ہم سے کہیں کچھ دوست ہمارے مت لکھو
جان اگر پیاری ہے پیارے مت لکھو
حاکم کی تلوار مقدس ہوتی ہے
حاکم کی تلوار کے بارے مت لکھو
کہتے ہیں یہ دار و رسن کا موسم ہے
جو بھی جس کی گردن مارے، مت لکھو
لوگ الہام کو بھی الحاد سمجھتے ہیں
جو دل پر وجدان اتارے مت لکھو
وہ لکھو بس جو بھی امیرِ شہر کہے
جو کہتے ہیں درد کے مارے مت لکھو
خود منصف پا بستہ ہیں لب بستہ ہیں
کون کہاں اب عرض گزارے مت لکھو
کچھ اعزاز رسیدہ ہم سے کہتے ہیں
اپنی بیاض میں نام ہمارے مت لکھو
دل کہتا ہے کھل کر سچی بات کہو
اور لفظوں کے بیچ ستارے مت لکھو
احمد فراز

نام خدا ہوا ہے اب وہ جوان بارے

دیوان پنجم غزل 1760
اٹھکھیلیوں سے چلتے طفلی میں جان مارے
نام خدا ہوا ہے اب وہ جوان بارے
اپنی نیاز تم سے اب تک بتاں وہی ہے
تم ہو خداے باطل ہم بندے ہیں تمھارے
ٹھہرے ہیں ہم تو مجرم ٹک پیار کرکے تم کو
تم سے بھی کوئی پوچھے تم کیوں ہوئے پیارے
کل میں جو سیر میں تھا کیا پھول پھول بیٹھی
بلبل لیے ہے گویا گلزار سب اجارے
کرتا ہے ابر نیساں پر در دہن صدف کا
منھ جو کوئی پسارے ایسے کنے پسارے
اے کاش غور سے وہ دیکھے کبھو ٹک آکر
سینے کے زخم اب تو غائر ہوئے ہیں سارے
چپکا چلا گیا میں آزردہ دل چمن سے
کس کو دماغ اتنا بلبل کو جو پکارے
میدان عشق میں سے چڑھ گھوڑے کون نکلا
مارے گئے سپاہی جتنے ہوئے اتارے
جو مر رہے ہیں اس پر ان کا نہیں ٹھکانا
کیا جانیے کہاں وے پھرتے ہیں مارے مارے
کیا برچھیاں چلائیں آہوں نے نیم شب کی
رخنے ہیں آسماں میں سارے نہیں ستارے
ہوتی ہے صبح جو یاں ہے شام سے بھی بدتر
کیا کہیے میر خوبی ایام کی ہمارے
میر تقی میر

شہر میں ایک ہی دو ہوں گے ہمارے جیسے

عرفان صدیقی ۔ غزل نمبر 274
شمعِ تنہا کی طرح، صبح کے تارے جیسے
شہر میں ایک ہی دو ہوں گے ہمارے جیسے
چھو گیا تھا کبھی اس جسم کو اک شعلۂ درد
آج تک خاک سے اڑتے ہیں شرارے جیسے
حوصلے دیتا ہے یہ ابرِ گریزاں کیا کیا
زندہ ہوں دشت میں ہم اس کے سہارے جیسے
سخت جاں ہم سا کوئی تم نے نہ دیکھا ہو گا
ہم نے قاتل کئی دیکھے ہیں تمہارے جیسے
دیدنی ہے مجھے سینے سے لگانا اس کا
اپنے شانوں سے کوئی بوجھ اتارے جیسے
اب جو چمکا ہے یہ خنجر تو خیال آتا ہے
تجھ کو دیکھا ہو کبھی نہر کنارے جیسے
اس کی آنکھیں ہیں کہ اک ڈوبنے والا انساں
دوسرے ڈوبنے والے کو پکارے جیسے
عرفان صدیقی

آگے وحشت جس کو پکارے

باقی صدیقی ۔ غزل نمبر 30
یاں تک آئے اپنے سہارے
آگے وحشت جس کو پکارے
جس کو اتنا ڈھونڈ رہے ہیں
جانے وہ کس گھاٹ اتارے
تیری آس پہ آرزوؤں نے
ہر رستے میں پاؤں پسارے
ہم نے جب پتوار سنبھالے
ابھرے طوفانوں سے کنارے
دنیا کو ہے شغل سے مطلب
تم ہارو یا باقیؔ ہارے
باقی صدیقی

اِنج ائی ساڈے ناں لکھیا اے، سودا انت خسارے دا

ماجد صدیقی (پنجابی کلام) ۔ غزل نمبر 67
سونے دی تاہنگاں وچ جیونکر، خبط نروئے پارے دا
اِنج ائی ساڈے ناں لکھیا اے، سودا انت خسارے دا
ہونی مگروں، بالاں وانگر، بِٹ بِٹ تکدے رہندے نیں
کملے لوکی، پیٹ پھُلاون، اُنج ائی رِیجھ غبارے دا
اساں ورگاں پاگل وی، دھرتی تے، کنّھے ہونا ایں
اپنے ہتھوں زہراں پھکئے، مگروں فکر اُتارے دا
کھول ائی دے، جے کھولنا چاہویں، پنکھ اخیرلے بولاں دے
آ پُجیا اے ویلا تیرے میرے پیار نِتارے دا
مارُو تھل چ خورے اسیں، ایہہ کس رہ تے پے گئے آں
کنڈا پیریں اِنج چُبھدا اے، جیونکر دَندا آرے دا
جنڈری ڈاہ کے، ہیٹھ آسماناں، سُکھ دی تھاں پیا لبھدا اے
ماجدُ بھا پُچھدا پھِردا اے، اج کل اِٹاں گارے دا
ماجد صدیقی (پنجابی کلام)