ٹیگ کے محفوظات: آنگنوں

کس زباں سے کسی سے کہیں وہ ہیں مسافر وہ کن دلدلوں کے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 48
حرص و نخوت کے اندھے نگر میں باپ ہیں جو جواں بیٹیوں کے
کس زباں سے کسی سے کہیں وہ ہیں مسافر وہ کن دلدلوں کے
شاخچوں کا جو اندوختہ تھا رس وہ چوسا ہے حبسِ زمیں نے
دھوپ ابکے چھتوں پر وہ اُتری پھول کملا گئے آنگنوں کے
خون میں خوف کی آہٹیں ہیں جسم در جسم کھولاہٹیں ہیں
ایک ہلچل سی اعصاب میں ہے ذہن مرکز ہیں یوں زلزلوں کے
شہرِ خفتہ کی گدلی فضا میں جانے کیا کیا دکھائی دیے ہیں
چشمِ بیدار میں چبھنے والے تُند کنکر نئے رتجگوں کے
زندگی دشتِ تاریک میں ہے جیسے بھٹکا ہوا شاہزادہ
جس کے ہر کُنج میں ایستادہ دیو ہیں نو بہ نو الجھنوں کے
وہ خودی ہو کہ خود انحصاری محض خوش فہمیاں ہیں کہ ہم نے
ہاتھ مصروف دیکھے ہیں جو بھی اُن میں پائے تھے بیساکھیوں کے
اِن مکینانِ فردوس پر بھی جیسے دوزخ کے در کھُل چلے ہوں
دِن بُرے آنے والے ہیں ماجد باغ میں سارے کچّے پھلوں کے
ماجد صدیقی

دم نہیں توڑا ابھی ذی روح نے اور باہم کر گسوں میں جنگ ہے

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 4
ہم جدھر دیکھیں فضا کے دوش پر، ایک جیسے دو دھڑوں میں جنگ ہے
دم نہیں توڑا ابھی ذی روح نے اور باہم کر گسوں میں جنگ ہے
اس سے بڑھ کر اور کیا ہو انتقام، اس سے بڑھ کر اور کیا بگڑے نظام
سازشِ طوفاں چلی کچھ اس طرح، اک شجر کے شاخچوں میں جنگ ہے
ابر کی جن پر ردائیں ایک ہیں، ایک سے موسم ہوائیں ایک ہیں
متّصل جن کی چھتیں ہیں شہر میں، ان گھروں ان آنگنوں میں جنگ ہے
ایک کے ہونٹوں پہ دیپک ہے اگر، دوسرا ملہار کے سر چھیڑ دے
جن سے ماجدؔ لطفِ جاں منسوب ہے، اب کے اُن نغمہ گروں میں جنگ ہے
ماجد صدیقی

شب کی ہم زاد اتری ہوئی سربہ سرآنگنوں میں ملی

ماجد صدیقی ۔ غزل نمبر 14
کہر سی نامرادی کی صبحِ سفرآنگنوں میں ملی
شب کی ہم زاد اتری ہوئی سربہ سرآنگنوں میں ملی
کھنچ رہا تھا پرندہ قفس سے نکل کر قفس کی طرف
تھی نہ قابل یقیں کے جو ایسی خبر آنگنوں میں ملی
ریزہ ریزہ بکھرتے گئے، جتنے اوراق تھے امن کے
فاختہ پھڑپھڑ اتی ہوئی مشت بھر آنگنوں میں ملی
مکر و فن کو نہ جس کی عروسی پھبن اک نظر بھا سکی
مانگ جس کی اجاڑی گئی وہ سحر،آنگنوں میں ملی
نیّتِ بد کہ میراث اہلِ ریا تھی، سکوں لُوٹنے
خرمنِ آرزو میں مثالِ شرر آنگنوں میں ملی
پچھلی رت کے دباؤ سے آنسو ہوا تک سے رسنے لگے
شکل احوال کی صورتِ چشمِ تر آنگنوں میں ملی
پو پھٹے پر بھی ماجدؔ نہ لے نام ٹلنے کا، آسیب سی
دہشتِ جبر جو شب کے پچھلے پہر آنگنوں میں ملی
ماجد صدیقی