زمرہ جات کے محفوظات: قطعہ

پہلے اک سایہ سا نکل کے گھر سے باہر آتا ہے

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 32
تھی جو وہ اک تمثیلِ ماضی آخری منظر اس کا یہ تھا
پہلے اک سایہ سا نکل کے گھر سے باہر آتا ہے
اس کے بعد کئی سائے سے اس کو رخصت کرتے ہیں
پھر دیواریں ڈھے جاتی ہیں دروازہ گر جاتا ہے
قطعہ
جون ایلیا

کیا عجب تھا کہ کوئی اور تماشہ کرتے

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 29
لہو روتے نہ اگر ہم دمِ رخصت یاراں
کیا عجب تھا کہ کوئی اور تماشہ کرتے
چلو اچھا ہے کہ وہ بھی نہیں نزدیک اپنے
وہ جو ہوتا تو اُسے بھی نہ گوارا کرتے
قطعہ
جون ایلیا

کچھ بھی ہو پر اب حد ادب میں رہا نہ جائے

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 27
ہر طنز کیا جائے، ہر اک طعنہ دیا جائے
کچھ بھی ہو پر اب حد ادب میں رہا نہ جائے
تاریخ نے قوموں کو دیا ہے یہی بیغام
حق مانگنا توہین ہے حق چھین لیا جائے
قطعہ
جون ایلیا

میں خود اپنا سوگ نشیں ہوں گنگاجی اور جمنا جی

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 25
مت پوچھو کتنا غمگین ہوں گنگا جی اور جمنا جی
میں خود اپنا سوگ نشیں ہوں گنگاجی اور جمنا جی
بان ندی کے پاس امروہے میں جو لڑکا رہتا تھا
اب وہ کہاں ہے میں تو وہیں ہوں گنگا جی اور جمنا جی
جون ایلیا

لباسِ مفلسی میں کتنی بے قیمت نظر آتی

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 24
جو رعنائی نگاہوں کے لئے فردوسِ جلوہ ہے
لباسِ مفلسی میں کتنی بے قیمت نظر آتی
یہاں تو جاذبیت بھی ہے دولت ہی کی پروردہ
یہ لڑکی فاقہ کش ہوتی تو بدصورت نظر آتی
جون ایلیا

میری تنہائی میں خوابوں کے سوا کچھ بھی نہیں

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 22
تم جب آؤ گی کھویا ہوا پاؤ گی مجھے
میری تنہائی میں خوابوں کے سوا کچھ بھی نہیں
میرے کمرے کو سجانے کی تمنا ہے تمہیں
میرے کمرے میں کتابوں کے سوا کچھ بھی نہیں
قطعہ
جون ایلیا

میں تو ہر وقت ہی مایوسِ کرم رہتا ہوں

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 14
آپ کی تلخ نوائی کی ضرورت ہی نہیں
میں تو ہر وقت ہی مایوسِ کرم رہتا ہوں
آپ سے مجھ کو ہے اک نسبتِ احساسِ لطیف
لوگ کہتے ہیں ، مگر میں تو نہیں کہتا ہوں
قطعہ
جون ایلیا

اپنے ہی زور میں کمزور ہوئی جاتی ہو

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 13
نشہ ءِ ناز نے بے حال کیا ہے تم کو
اپنے ہی زور میں کمزور ہوئی جاتی ہو
میں کوئی آگ نہیں، آنچ نہیں، دھوپ نہیں
کیوں پسینہ میں شرابور ہوئی جاتی ہو
قطعہ
جون ایلیا

متاعِ جاں ہیں ترے قول اور قسم کی طرح

جون ایلیا ۔ قطعہ نمبر 10
یه ترے خط تری خوشبو یہ تیرے خواب خیال
متاعِ جاں ہیں ترے قول اور قسم کی طرح
گذشتہ سال انہیں میں نے گن کے رکھا تھا
کسی غریب کی جوڑی ہوئی رقم کی طرح
قطعہ
جون ایلیا