یقین

میں غرقِ مئے خواب رہا اور کئی غم

پلتے رہے آنگن میں پنپتے رہے پیہم

خواہش تھی اجالوں کی مگر تلخیِ حالات

دامن میں اتر آئی فقط رات! فقط رات

پروردۂ آغوشِ گماں ایک یقیں ہے

دنیا مرے ہر خواب کی دنیا میں کہیں ہے

یاور ماجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s