دعا — بددعا

24 جولائی 2008

اُداس چہرے

نڈھال بانہیں

تھکن میں لپٹی ہوئی نگاہیں

یہ پیلے پیلے فلک سے ہر دم

برستے شعلے

ہر ایک چہرے سے دیکھو ہر دم

عجب اُداسی برس رہی ہے

شکستہ دِل ہے

شکستہ پا ہے

ہر ایک دھڑکن

ہر اک قدم بھی

خدائے برتر

خدائے عالم۔۔۔

اب اس تڑپتے ہوئے جہاں پر

ذرا سا ہو جائے کچھ کرم بھی

کرخت چہرے

لپکتی بانہیں

ہوس میں لتھڑی ہوئی نگاہیں

یہ دھول مٹی میں لپٹی سڑکیں

شکار گاہیں

ہر ایک چہرے سے دیکھو کیسی

عجیب وحشت برس رہی ہے

حریص دِل ہیں

رئیس زادے

یہ گرگ سارے

یہاں کے جم بھی

خدائے برتر

خدائے عالم۔۔۔

اب اس پنپتی شکار گہ میں

کوئی تو بازو کرو قلم بھی

یاور ماجد

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s