یہ شیشے کی عمارت پتھروں کے نام ہو جائے

قیامت ہے، مرا دل مرکزِ آلام ہو جائے
یہ شیشے کی عمارت پتھروں کے نام ہو جائے
خموشی بول اُٹّھے، ہر نظر پیغام ہو جائے
یہ سنّاٹا اگر حد سے بڑھے، کُہرام ہو جائے
اُدھر مہتاب اونچا ہو ذرا چھت کی منڈیروں سے
اِدھر قربان اس پر آفتابِ شام ہو جائے
ہمیں تو ہر قدم پر کارواں کا ساتھ دینا ہے
جہاں سب ہم سفر چاہیں ، وہیں بِسرام ہو جائے
ستارے مشعلیں لے کر مجھے بھی ڈھونڈنے نکلیں
میں رستہ بھول جاؤں ، جنگلوں میں شام ہو جائے
میں وہ آدم گزیدہ ہوں جو تنہائی کے صحرا میں
خود اپنی چاپ سن کر لرزہ بر اندام ہو جائے
مثال ایسی ہے اس عہدِ خرد کے ہوش مندوں کی
نہ ہو دامن میں ذرّہ، اور صحرا نام ہو جائے
شکیبؔ! اپنے تعارف کے لیے یہ بات کافی ہے
ہم اس سے بچ کے چلتے ہیں ، جو رستہ عام ہو جائے
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s