ہمارا دَور

گُلوں میں حُسن‘ شگوفوں میں بانکپن ہو گا

وہ وقت دُور نہیں جب چمن چمن ہو گا

جہاں پہ آج بگولوں کا رقص جاری ہے

وہیں پہ سایہِ شمشاد و نسترن ہو گا

فضائیں زرد لَبادے اُتار پھینکیں گی

عروسِ وقت کا زَرکار پیرہن ہو گا

نسیمِ صبح کے جھونکے جواب دہ ہو ں گے

کسی کلی کا بھی ماتھا جو پُر شکن ہو گا

نئے اصول نئی منزلیں تراشیں گے

یہ قافلہ مہ و انجم میں خیمہ زَن ہو گا

بڑے سُکون سے تعمیرِ زندگی ہو گی

کہیں یزید‘ نہ آزر‘ نہ اہرمن ہو گا

بُتانِ عصر کے خالق کو باخبر کردو

نئے زمانے کا ہر فرد بُت شکن ہو گا

دُکھے دلوں کی خراشیں جو کرسکے محسوس

اک ایسا صاحبِ دل صدرِ انجمن ہو گا

ہمارا دَور مساوات لے کے آئے گا

ہمارے دَور میں ہر آدمی مگن ہو گا

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s