ہلالِ عید

یہ ہلالِ عید ہے قوسِ افق پر ضَو فگن

نیلگوں خیمے میں یا بیٹھی ہے کوئی سیم تَن

پُر تکلّف موڑ ہو جس طرح، جُوے شیر میں

یا ذرا خم آگیا ہو شاہدِ تنویر میں

مانگ ہو افشاں کی جیسے سنگِ مرمر کی کماں

جیسے انگشتِ سلیماں پر انگوٹھی کا نشاں

جس طرح برقاب خنجر، جیسے چاندی کی کٹار

یا کسی معصوم دوشیزہ کے سینے کا اُبھار

اس قدر نازک ادا جیسے کلائی حُور کی

اس قدر شفاف جیسے قاش ہو بِلُّور کی

نُورِ پیغامِ مسرّت ہر کرن سے ضَوفشاں

مطلعِ انوارِ عشرت ہیں زمین و آسماں

جس کو دیکھو آج اسی کو اشتیاقِ دید ہے

کوئی البیلی دُلھن ہے یا ہلالِ عید ہے

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s