کیوں شام ہی سے بُجھ گئے محفل کے سب چراغ

روشن ہیں دل کے داغ،نہ آنکھوں کے شب چراغ
کیوں شام ہی سے بُجھ گئے محفل کے سب چراغ
وہ دن نہیں ‘ کرن سے کرن میں لگے جو آگ
وہ شب کہاں ‘ چراغ سے جلتے تھے جب چراغ
تِیرہ ہے خاکداں ‘ تو فلک بے نجوم ہے
لائے کہاں سے مانگ کے دستِ طلب چراغ
روشن ضمیر آج بھی ظلمت نصیب ہیں
تم نے دیے ہیں پوچھ کے نام و نسب چراغ
وہ تیرگی ہے دشتِ وفا میں کہ اَلامَاں !
چمکے جو موجِ ریگ تو پائے لقب چراغ
دن ہو اگر‘ تو رات سے تعبیر کیوں کریں
سورج کو اہلِ ہوش دکھاتے ہیں کب چراغ
اے بادِ تُند! وضع کے پابند ہم بھی ہیں
پتھر کی اوٹ لے کے جلائیں گے اب چراغ
شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s