پیامِ اقبال

……… 1 ………

بانسری پر کوئی دُھن چھیڑ کے کھوجا اس میں

مدھ بھری تان میں ہر گیت سناتا ہوا چل

راہ کی خُشک فضاؤں میں ترنّم گونجے

خواب آلود نظاروں کو جگاتا ہوا چل

بَربَطِ زیست پہ ہر گیت سُناتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 2 ………

قافلے سے جو بچھڑ جائے مسافر کوئی

تیرے گیت اس کے لیے بانگِ درا بن جائیں

جب کوئی راہ بھٹکنے لگے منزل کے قریب

تیرے قدموں کے نشاں راہ نما بن جائیں

نقشِ پا سے رہِ منزل کو سجاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 3 ………

آبشاروں کے ترنّم ہی میں کھو جائے نہ تُو

راہ کی مست بہاروں کی تمنّا مت کر

جو کہ منزل کو بھلانے کی تجھے دعوت دیں

ایسے پُرکار نظاروں کی تمنّا مت کر

تشنگی صرف نگاہوں کی بُجھاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 4 ………

اس قدر تیز نہ چل جلد ہی تھک جائے گا

تھک کے رُک جانا تری شان کے شایاں بھی نہیں

پھر تُو کچھ دیر کہیں بیٹھ کے سستائے گا

اور سُستانا تری شان کے شایاں بھی نہیں

ایک رفتار سے قدموں کو بڑھاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 5 ………

منزلیں خود ترے قدموں کی تمنّائی ہیں

جُستجو میں ہیں تری خود ہی نشانِ منزل

پست ہمّت نہ بن اُمیّد سے مایوس نہ ہو

مل ہی جائیں گے کبھی خود ہی نشانِ منزل

ناامیدی کی چٹانوں کو ہٹاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 6 ………

دُور تک کوئی مسافر ہے نہ کوئی راہی

کس جگہ تیرے عزائم تجھے لے آئے ہیں

ہیں قدم تیرے ابھی زیرِ افق ہی شاید

کیسے بے رنگ دُھندلکے سے یہاں چھائے ہیں

عزمِ راسخ کے چراغوں کو جلاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

……… 7 ………

تجھ کو آغوش میں لینے کو ہے بے تاب قمر

منتظر تیرے ابھی تک ہیں افق کے جادے

کون کہتا ہے کہ وہ تیری گزرگاہ نہیں

تیری منزل ہے ستاروں کے جہاں سے آگے

پرتوِ نور ہے تو عرش پہ چھاتا ہوا چل

تجھ کو جانا ہے بہت دور‘ بہت دور ابھی

شکیب جلالی

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s